Latest Post
Loading...

Maa Ka Aik Khat Apne Shaheed Bache K Liye

 

ماں کا ایک خط اپنے شہید بچے کے لیے

 میرے لختِ جگر
یہ سال جو میں نے تمہارے بن گزارا ہے
تمہیں معلوم ہے یہ میری سوتی جاگتی آنکھیں
تمہیں اس سال کے ہر روز و شب کے آٹھوں پہروں میں
مسلسل اپنی پلکوں کی گھنی شاخوں کے جھولے میں جھولاتی تھیں

تمہارے واسطے ہر روز اٹھ کر میں تمہارا ناشتہ تیار کرتی
گیٹ پر جاتی کسی رہگیر کے بچے کو کھلاتی
پھر تمہارے جوتے پالش کر کے ہینگر میں لگے اپنے جگر گوشے کا یونیفارم دوبارہ پریس کر کے اسے ہینگر میں لٹکاتی

تمہارے ہی برش سے اپنے بکھرے بکھرے بالوں کو برش کرتی
تمہارے بیگ میں ترتیب سے رکھی کتابوں،کاپیوں اور پینسلوں کو
پہلے بے ترتیب کرتی ،پھر انہیں ترتیب سے رکھتی رہی ہوں میں

مرے بچے!
مجھے معلوم ہے کہ تم مر کے بھی زندہ ہو
لیکن،یہ جو میری پلکوں کی شاخوں پہ جگنو سے لرزتے ہیں
نہ جانے یہ میری ممتا کی جگمگ کوٹھری سے کس طرح باہر نکل کر
پلکوں کی شاخوں تک آ جاتے ہیں
میں تو کیا کوئی بتلا نہیں سکتا
مگر مجھ کو پتا ہے، مجھ کو پتا ہے کہ اس گزرے برس کے تین سو پینسٹھ دنوں میں یہ جگنو! تمہاری روح کے اندر چراغوں کی طرح جلتے رہے ہیں۔۔

میرے لختِ جگر
یہ سال جو میں نے تمہارے بن گزارا ہے
تمہیں معلوم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک شہید بیٹے کا خط اپنی ماں کے نام

میں خوش قسمت ہوں پیاری ماں
شہید ہو کر میں اس رتبے پر فائزہوں
تمنا جس کی اللہ کے رسولوں کے دلوں میں بھی دھڑکتی تھی
ماں ۔۔تو خوش قسمت ہے
تیرے دل کا ٹکرا مر کے بھی زندہ ہے پیاری ماں!
بہت روئی ہے تو ان تین سو پینسٹھ دنوں میں تو بہت روئی ہے میری ماں!
تیری آنکھوں کے جگنو
تیری پلکوں سے اتر کر میرے جسم و جاں کے اندر بھی چمکتے تھے
مگر اب ، اب نہیں رونا
میرے بستے کی پچھلی جیب کے اندرتری اورمیری اک تصویر ہے
جو میں نے کھینچی تھی، اسے تکیے میں سی لو ماں !
میں اب ہر روز تجھ کو تیری ہی گائی ہوئی لوری سناؤں گا
اور اپنے بچپنے کی نیند کے آغوش میں تجھے کو سلاؤں گا۔۔۔۔۔۔

_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-_.-

Maa Ka Aik Khat Apne Shaheed Bache K Liye

Mere Lakht-e-Jigar

Ye Saal Jo Mein Ne Tumhare Bin Guzara Hai,

Tumhain Maloom Hai Ye Meri Soti Jagti Aankhein

Tumhein Is Saal K Har Roz-o-Shab K Aathon Peharon Mein,

Musalsal Apni Palkon Ki Ghani Shakhon K Jholay Mein  Jholati Thein,

Tumhare Waaste Har Roz Uth Kar Main Tumhara Naashta Tayaar Karti

Gate Par Jati Kisi Raahgeer K Bache Ko Khilati,

Phir Tumhare Jote Polish Kar K Hanger Mein Lage Apne Jigar-Goshay Ka

Uniform Dobara Press Kar K Ise Hanger Mein Latkaati

Tumhare Hi Bursh Se Apne Bhikre Bhikre Baalon Ko Bursh Karti

Tumhare Baig Mein Tarteeb Se Rakhi Kitaabon,Kaapion,Pencilon Ko

Pehle Be-Tarteeb Karti,Phir Inhein Tarteeb Se Rakhti Rahi Hon Main,

Mere Bachhe!

Mujhe Maloom Hai Keh Tum Mar Kar Bhi Zinda Ho,

Lekin, Ye Jo Meri Palkon Ki Shakhoon Pe Jugno Se Larazte Hain,

Na Jaane Ye Meri Maamta Ki Jagmag Khotrhi Se Kis Tarha Bahir Nikal Kar

Palkon Ki Shaakhon Tak Aa Jate Hain,

Main To Kia Koi Batla Nahi Sakta

Magar Mujh Ko Pata Hai,

Mujh Ko Pata Hai,

Keh Is Guzre Bars K Teen So Pensath Dinon Main Ye Jugno,

Tumhari Rooh K Andar Charaghon Ki Tarah Jaltay Rahe Hain

Mere Lakht-e-Jigar

Ye Saal Jo Main Ne Tumhare Bin Guzara Hai,Tumhein Maloom ......

................................................................................................

Aik Shaheed Betay Ka Khat Apni Maa K Naam

Main Khush Qismat Hon Piyari Maa!

Shaheed Ho Kar Mein Is Rutbe Par Fa'iz Hon,

Tamanna Jis Ki ALLAH K Rasoolon K Dilon Mein Bhi Dharrakti Thi,

Maa To Khush Qismat Hai,

Tere Dil Ka Tokrra Mar Kar Bhi Zinda Hai Piyari Maa!

Buhat Roi Hai Tu In Teen So Pensath Dinon Mein Tu Buhat Roi Hai Meri Maa!

Teri Aankhon K Jugno

Teri Palkon Se Utar Kar Mere Jism-o-Jaan K Andar Bhi Chamakte Thay,

Magar Ab,Ab Nahi Rona

Mere Bastay Ki Pechli Jaib K Andar Teri Aur Mairi Ik Tasveer Hai,

Jo Main Ne Khenchi Thi,Ise Takye Main See Lo Maa!

Main Ab Har Roz Tujh Ko Teri Hi Gayi Hoi Lori Sunaon Ga,

Aur Apne Bachpane Ki Neend K Aaghosh Mein Tujh Ko Sulaon Ga.......!


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer