Latest Post
Loading...

Ik Shaks Meri Umar Ka Inwaan Le Gaya

شاعرہ نجمہ شاہین کھوسہ
بوک میں آنکھیں بند رکھتی ہوں
صفحہ 196

انتخاب اجڑا دل

اک شحص میری عمر کا عنوان لے گیا
میرے یقیں میرے سفر کا سامان لے گیا

کچھ خواب تھے کہ پھول تھے تعبیر تھی یہاں
خواہشوں سے سجا میرا گلستان لے گیا

یادوں کے پھول جس میں سجاتی رہی تھی میں
ہاتھوں سے میرے کون یے گلدان لے گیا

تنکوں کا آشیاں جو بنایا تھا شوق سے
وہ بھی اڑا کے ساتھ طوفان لے گیا

وعدہ بھی ساتھ لے گیا جاتے ہوۓ وہ آج
ملنے کا آخری تھا جو امکان لے گی

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer