Latest Post
Loading...

Rag-o-pe Mein Sama Gai Barish,Piyaas Dil Ki Barrha Gai Barish

رگ و پے میں سما گئی بارش

پیاس دل کی بڑھا گئی بارش

طاق _ نسیاں کی خامشی میں پھر

جل ترنگ اک بجا گئی بارش

! دیکھ نیرنگی _ تمنا ، دوست

دھوپ چاہی تھی ، آ گئی بارش

! کیا خبر ابر کے سفیروں کو

کتنی شمعیں بجھا گئی بارش

! تو کہیں بھیگتا نہ ہو تنہا

ایک دھڑکا لگا گئی بارش

بند کھڑکی کے صاف شیشوں پر

عکس تیرا بنا گئی بارش

آج مُٹّھی جو کھول کر دیکھا

نام تیرا مِٹا گئی بارش

وقتِ رُخصت تجھے نہیں معلوم

کتنے آنسو چھپا گئی بارش

قطرہ قطرہ گِری مگر پھر بھی

زخم گہرا لگا گئی بارش

چشمِ گریاں سے چشمِ حیراں تک

اک دھنک سی بچھا گئی بارش

گنگنانے لگِیں تری یادیں

تار غم کے ہلا گئی بارش

! کھل گئیں آشنایاں کیا کیا

گردِ ماضی ہٹا گئی بارش

تیرے بے لاگ بھیگ جانے پر

اپنا مشکیزہ ڈھا گئی بارش

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer