Latest Post
Loading...

Sub Taq Mere Diye Se Khali The, Be Barag-O-Samar Badan Ki Dali,

 

=== جواز ===

شاعرہ
پروین شاکر
بوک خود کلامی صفہہ 18 19

انتخاب اجڑا دل

کتنی سنسان زندگی تھی
سب طاق میرے دیے سے خالی
بے برگ و ثمر بدن کی ڈالی
کھڑکی پہ نہ آکے بیٹھی چڑیا
آنگن میں بھٹک سکے نہ تتلی
سنجوگ کی بے نمو رتوں سے
میں کتنی اداس ہو چلی تھی
آواز کے سیل بے پناہ میں
میں تھی میرے گھر کی خامشی تھی
پر دیکھ تو آکے لال میرے
اس کلبۂ غم میں مجھ کو تیرے
آنے کی نوید کیا ملی ہے
جینے کا جواز مل گیا ہے

Parveen Shakir Apny Lakhat-E-Jigar Murad Sy Mukhatib Hy In Alfaz Mein

Poetess Parveen Shakir

Kitni Sunsan Zindagi Thi,

Sub Taq Mere Diye Se Khali The,

Be Barag-O-Samar Badan Ki Dali,

Khirrki Pe Na Aa K Bethe Chirriya,

Aangan Mein Bhatak Sake Na Titli,

Sanjog Ki Be Namoo Rutoon Se,

Main Kitni Udas Ho Chali Thi.

Aawaz K Sail Be Panaah Mein,

Main Thi Mere Ghar Ki Khaamshi Thi,

Par Dekh To Aa K Laal Mere,

Is Kalba-E-Gham Mein Mujh Ko,

Tere Aane Ki Naveed Kaya Mili Hai,

Jeene Ka Jawaz Mil Gaya Hai.....................*


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer