Latest Post
Loading...

Uss Bewafa Ka Shehar Hai Aur Hum Hain Dosto Ashk-e-Rawaan Ki Nihar Hai Aur Hum Hain Dosto


شاعر: منیر نیازی
گلوکارہ: لبنی ندیم
اس بیوفا کا شہر ہے اور ہم ہیں دوستو
اشک رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو
شام عالم ڈھلی تو چلی درد کی ہوا !
راتوں کا پچھلا پہر ہے اور ہم ہیں دوستو
آنکھوں میں اُڑ رہی ہے لٹی محفلوں کی دھول
عبرت سرائے دہر ہے اور ہم ہیں دوستو
یہ اجنبی سی منزلیں اور رفتگان کی یاد
تنہائیوں کا زہر ہے اور ہم ہیں دوستو

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer