Latest Post
Loading...

Agar Kaabe Ka Rukh Bhi Janib-e-Maikhana Ho Jaye,To Phir Sajda Mere Har Laghzish-e-Paimana Ho Jaye


اگر کعبے کا رُخ بھی جانبِ میخانہ ہو جائے
تو پِھر سجدہ میری ہر لغزشِ پیمانہ ہو جائے

وہی دِل ہے جو حُسن و عشق کا کاشانہ ہو جائے
وہی سر ہے جو کِسی تیغ کا نذرانہ ہو جائے

یہ اچھی پردہ داری ہے،یہ اچھی راز داری ہے
کہ جو آئے تمہاری بزم میں دیوانہ ہو جائے

میرا سَر کٹ کے مقتل میں گِرا قاتل کے قدموں پر
دمِ آخر ادا یوں سجدہء شکرانہ ہو جائے

تیری سرکار میں لایا ہوں ڈالی حسرتِ دِل کی
عجب کیا ہے میرا منظور یہ نذرانہ ہو جائے

وہ سجدے جِن سے برسوں ہم نے کعبے کو سجایا ہے
جو بُت خانے کو مِل جائیں تو پِھر بُت خانہ ہو جائے

یہاں ہونا نہ ہونا ہے،نہ ہونا عین ہونا ہے
جِسے ہونا ہو کچھ خاکِ دِرِ جاناہ ہو جائے

سحر تک سب کا ہے انجام جل کر خاک ہو جانا
بنے محفل میں کوئی شمع یا پروانہ ہو جائے

وہ مے دے دے جو پہلے شِبلی و منصور کو دی تھی
تو بیدم بھی نِثارِ مرشدِ میخانہ ہو جائے

بیدم شاہ وارثی

مصحفِ بیدم

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer