Latest Post
Loading...

Husn Saada Ka Waar Aankhein Hain,Bin Tere Be-Qaraar Aankhein Hain



حسنِ سادہ کا وار آنکھیں ہیں 
بن ترے بیقرار آنکھیں ہیں

میری جانب ہے جو ترا چہرہ
میری جانب ہزار آنکھیں ہیں

عیب تیرا کہاں چھپے گا اب
شہر میں بے شمار آنکھیں ہیں

میں نے طرز وفا تھا اپنایا
اس لئے اشکبار آنکھیں ہیں

پارسائی کہاں گئی؟ بولو!
آج کیوں داغدار آنکھیں ہیں؟

ایک نقشہ تھا خواب کا کھینچا
اس لئے تار تار آنکھیں ہیں

جیسے ان میں سحاب رہتے ہوں 
کتنی زار و قطار آنکھیں ہیں

جن کی تعبیر میں ملے وحشت 
ایسے خوابوں پہ بار آنکھیں ہیں

وہ جو چہرہ ہی پڑھ نہیں سکتیں
کتنی جاہل گوار آنکھیں ہیں

وہ نظر آر پار ہوتی ہے
ہائے کیا دلفگار آنکھیں ہیں

خواب دیکھا رباب نے کیونکر
اس لئے سوئے دار آنکھیں ہیں

فوزیہ رباب
 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer