Latest Post
Loading...

Jis Roz Hamara Kooch Hoga,Phoolon Ki Dukanein Band Hon Gi


جس روز ھمارا کُوچ ھو گا
پھولوں کی دکانیں بند ھوں گی
شیریں سخنوں کے حرف دشنام
بے مہر زبانیں بند ھوں گی
پلکوں پہ نمی کا ذکر ھی کیا
یادوں کا سراغ تک نہ ھو گا
ھموارئ ھر نفس سلامت
دل پر کوئی داغ تک نہ ھو گا
پامالئ خواب کی کہانی
کہنے کو چراغ تک نہ ھو گا۔
معبود ! اِس آخری سفر میں
تنہائی کو سرخ رُو ھی رکھنا
جز تیرے نہیں کوئی نگہدار
اُس دن بھی خیال ، تُو ھی رکھنا
جس آنکھ نے ، عمر بھر رُلایا
اس آنکھ کو ، بے وضُو ھی رکھنا
افتخار عارف

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer