Latest Post
Loading...

Kabhi Un Ka Naam Laina Kabhi Un Ki Baat Karna Mera Zuoq Unki Chahat Mera Shuoq Un Pe Marna

Poet:Naseer-O-Deen Naseer

Type By

*.__NOMI__.*

Kabhi Un Ka Naam Laina Kabhi Un Ki Baat Karna

Mera Zuoq Unki Chahat Mera Shuoq Un Pe Marna

Wo Kisi Ki Jheel Aankhein Wo Meri Junoon Mizaji

Kabhi Doobna Ubhar Kar Kabhi Doob Kar Ubharna

Tere Manchalon Ka Jag Mein Ye Ajab Chalan Raha Hai

Na Kisi Ki Baat Sun'na Na Kisi Se Baat Karna

Shab-e-Gham Na Pooch Kaise Tere Mubtala Pe Guzri

Kabhi Aah Bhar Ke Girna Kabhi Gir Ke Aah Bharna

Wo Teri Gali Ke Taiver Wo Nazar Nazar Pe Pehre

Wo Mera Kisi Bahane Tujhe Dekhtay Guzarna

Kahan Mere Dil Ki Hasrat,Kahan Meri Na-Rasaayi

Kahan Tere Gaiso'oun Ka Tere Dosh Par Bikharna

Chalay Laakh Chaal Dunya,Ho Zamana Laakh Dushman

Jo Teri Panaah Mein Ho Usay Kia Kisi Se Darna

Wo Karengy Na-Khudaai To Lagay Gi Paar Kashti

Hai NASEER Warna Mushkil Tera Paar Yun Utarna


کبھی اُن کا نام لینا کبھی اُن کی بات کرنا
مِرا ذوق اُن کی چاہت مِرا شوق اُن پہ مرنا
وہ کسی کی جھیل آنکھیں وہ مِری جُنوں مِزاجی
کبھی ڈُوبنا اُبھر کر کبھی ڈُوب کر اُبھرنا
تِرے منچلوں کا جگ میں یہ عجب چلن رہا ہے
نہ کِسی کی بات سُننا نہ کِسی سے بات کرنا
شبِ غم نہ پُوچھ کیسے تِرے مُبتلا پہ گُزری
کبھی آہ بھر کے گِرنا کبھی گِر کے آہ بھرنا
وہ تِری گلی کے تیور، وہ نظر نظر پہ پہرے
وہ مِرا کِسی بہانے تُجھے دیکھتے گُزرنا
کہاں میرے دِل کی حسرت، کہاں میری نارسائی
کہاں تیرے گیسوؤں کا تِرے دوش پر بِکھرنا
چلے لاکھ چال دُنیا ہو زمانہ لاکھ دُشمن
جو تِری پناہ میں ہو اُسے کیا کِسی سے ڈرنا
وہ کریں گے ناخُدائی تو لگے گی پار کشتی
ہے نصیر ورنہ مُشکل تِرا پار یوں اُترنا
نصیرالدین شاہ نصیر

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer