Latest Post
Loading...

Mujh Kamli Ka Singhaar Piya,In Saanson Ka Sardar Piya


مجھ کملی کا سنگھار پیا
ان سانسوں کا سردار پیا

تجھ بن در، چھت، دیوار ڈسے
تجھ بن سونا گھر بار پیا

ہر جذبے کی پہچان بھی تو
تو سانول ، تودلدار پیا

ان سر آنکھوں پر حکم ترا
میں مانوں ہر ہر بار پیا

تو ہی میرا غمخوار سجن
میں کرتی ہوں اقرار پیا

اب سانسیں چُور و چُور ہوئیں
اب آ مل تو اک بار پیا

اک دکھ نے گھیرا ڈال لیا
اب لے چل نگری پار پیا

ہے من اندر اک آس تری
تُو سانسوں کو درکار پیا

ہر منزل پا کر ہجر ملے
سب راہیں بھی پُر خار پیا

تو پاکیزہ سی ایک دعا
یہ دل تیرا دربار پیا

اک سکھ سے سوئے وصل ترا
جانے کب ہو بیدار پیا

پھر چاہت کی اک بات تو کر
مت چپ چپ رہ کر مار پیا

تک تک راہیں اب نین تھکے
یہ برسیں زاروزار پیا

اب دے ہاتھوں میں ہاتھ مرے
میں اک تیری بیمار پیا

فوزیہ رباب
 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer