Latest Post
Loading...

Saara Qissa Tamam Kar Guzron,Zindagi Tere Naam Kar Guzron



سارا قصہ تمام کر گزروں 
 زِندگی تیرے نام کر گزروں

 طاق پر ٹِمٹِما رہا ہے چراغ 
 آخری ایک شام کر گزروں

 جا کے بس جاؤں میں دِلوں میں کہیں 
 اپنا ایسا مقام کر گُزروں

 روند کر رکھ دوں میں جوانی کو؟ 
 زندگی نذرِ جام کر گزروں؟

 میں الٹ دون تمام تدبیری
 اس کو اپنا غلام کر گزروں

 تیری تعمیر کے پس ِ پردہ
 اپنا میں انہدام کر گزروں

 کیا پتا پھول کھل رہے ہوں وہاں 
 اک نظر سُوئے بام کر گزروں

عدنان اثر


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer