Latest Post
Loading...

Tu Ne Chaha Tha Keh Main Toot Ke Chaahon Tujh Ko



تُو نے چاہا تھا کہ میں ٹوٹ کے چاہوں تجھ کو
وقت آنے پہ مری جان یہ دیکھا تُو نے
اپنے اس پیکرِ کمزور پہ لادے میں نے
تیری دن بھر کی تھکن، درد کے کتنے انبار
تیری راتوں کی چبھن، جسم کی مایوس پکار
اور پھر مرحلہء شوق میں رکھے جو قدم
میں بھٹکتا ہی رہا شہر کی گلیوں میں مدام
طنز کچھ ایسے ملے جن پہ ہو تعریف نثار
دشتِ غربت میں ملے جس طرح کوئی خوددار
راہ چلتے ہوئے دیکھے کئی ذہنی بیمار
قتل و غارت سے بھرے شہر کے سارے اخبار
پھر ترے پیار کو اور ملک کے اس منظر کو
اس قدر ٹوٹ کے چاہا کہ میں خود ٹوٹ گیا
تو نے چاہا تھا کہ میں ٹوٹ کے چاہوں تجھ کو؟؟

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer