Latest Post
Loading...

Ye Daulat Bhi Le Lo Shohrat Bhi Le Lo Bhale Chhin Mujhse Meri Jawani Magar Mujhko Lota De


یہ دولت بھی لے لو، یہ شہرت بھی لے لو
بھلے چھین لو مجھ سے میری جوانی
مگر مجھ کو لوٹا دو بچپن کا ساون
وہ کاغذ کی کشتی وہ بارش کا پانی

محلے کی سب سے پرانی نشانی
وہ بڑھیا جسے بچے کہتے تھے نانی
وہ نانی کی باتوں میں پریوں کا ڈھیرا
وہ چہرے کی جہریوں میں میں صدیوں کا پھیرا
بھلائے نہیں بھول سکتا ہے کوئی
وہ چھوٹی سی راتیں وہ لمبی کہانی

کھڑی دھوپ میں اپنے گھر سے نکلنا
وہ چڑیاں وہ بلبل وہ تتلی پکڑنا
وہ گھڑیا کی شادی میں لڑنا جھگڑنا
وہ جھولوں سے گرنا وہ گر کہ سنبھلنا
وہ پیتل کے چھلوں کے پیارے سے تحفے
وہ ٹوٹی ہوئی چوڑیوں کی نشانی

کبھی ریت کے اونچے ٹیلوں پہ جانا
گھروندے بنانا بنا کہ مٹانا
وہ معصوم چاہت کی تصویر اپنی
وہ خوابوں خیالوں کی جاگیر اپنی
نہ دنیا کا غم تھا نہ رشتوں کا بندھن
بڑی خوبصورت تھی وہ زندگانی
کلام : سدرشن فاکر

****************************************

Song : Woh Kagaz Ki Kashti

Music : Chitra Singh (Chitra Dutta), Jagjit Singh

Lyrics : Sudarshan Faakir

Singers : Jagjit Singh

Ye Daulat Bhi Le Lo Shohrat Bhi Le Lo Bhale Chhin
Mujhse Meri Jawani Magar Mujhko Lota De
Bachpan Ka Sawan
Woh Kagaz Ki Kashti Wo Barish Ka Pani
Woh Kagaz Ki Kashti Wo Barish Ka Pani

Muhale Ki Sabse Purani Shaan
Woh Bhudhiya Jise Bache Kehte
The Naani
O Naani Ki Bato Me Pariyo Ka Dera
Woh Chehre Ki Jhuriyo Me
Sadiyo Ka Khera
Bhulaye Nahi Bhul Sakta Hai Koi
Bhulaye Nahi Bhul Sakta Hai Koi
Woh Chhoti Si Raat Wo Lambi Kahani
Woh Chhoti Si Raat Wo Lambi Kahani

Kadi Dhup Me Mai Ghar Se Na Niklna
Woh Chidiya Wo Titliyo Ka Ghar
Woh Gudiya Ki Shadi Pe Ladna Jhagdana
Woh Jhulo Se Girna Wo Girke Sambhalna
Woh Pipal Ke Chhalo Ke Pyare Se Kante
Woh Pipal Ke Chhalo Ke Pyare Se Kante
Woh Tuti Huyi Churiyo Ki Nishani
Woh Kagaz Ki Kashti Wo Barish Ka Pani
Woh Kagaz Ki Kashti Wo Barish Ka Pani
Woh Kagaz Ki Kashti Wo Barish Ka Pani.


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer