Latest Post
Loading...

Zulam Ki Inteha Nahi Kartay,Khud Ko Khud Se Juda Nahi Kartay



نام: سارم راجا
جائے پیدائش : کھاریاں 
سکونت:  سرائے عالمگیر 
تاریخ پیدائش: 12 فروری 1984
شعری سفر: 2001 سے
 
ظلم  کی  انتہا  نہیں  کرتے
خود کو خود سے جدا نہیں کرتے

جو ذرا سی بھی عقل رکھتے ہیں 
وہ  کسی  کو  خفا  نہیں  کرتے

حسن ایسا محاذ ہے جس پر 
لڑنے والے بچا نہیں کرتے

دوسروں کی تو بات ہی چھوڑو
لوگ خود سے  وفا  نہیں کرتے

یہ شجر بھی فقیر ہیں لیکن 
ہر کسی پر کھلا نہیں کرتے

*************


سب  فقیروں  کی  نشانی  بھوک  ہے
سو سبھی کچھ دے کے پانی بھوک ہے

اس جہاں میں جس قدر  ہے  ابتری
اس  کے پیچھے اک کہانی بھوک ہے

میرے فاقوں کا  سبب جو  لوگ  ہیں 
ان کے حصے میں بھی آنی بھوک ہے

ہم غریبوں کو  یہی  ہے  ایک  غم
کس طریقے سے مٹانی بھوک ہے

آج بھی کچھ پاس کھانے کو نہیں 
آج بھی خود کو کھلانی بھوک ہے

مجھ سے پوچھو غم کے کتنے روپ ہیں 
میری ساری زندگانی بھوک ہے

*************

غربت نے کیا کام کیا ہے
ماں نے بچہ  مار  دیا  ہے

مجھ کو میرے دل کی زمیں پر 
غم  نے  جبراََ  جوت  لیا  ہے

اپنا  آپ  مسیحا  بن  کر 
سینے والا زخم سیا ہے 

تم نے میرا چہرہ پڑھ کر
 مجھ کو کیسے جان لیا ہے

میرے پہلو میں دفنانا 
غم بھی میرے ساتھ جیا ہے

*************

مری سوچوں پہ حاوی ہو گیا ہے
مرے دل میں جو ڈر بیٹھا ہوا ہے

مرے مالک انہیں آسانیاں دے
غم ِدوراں جنہیں بہکا رہا ہے

مجھے اپنی حقیقت کا پتا بھی
ترے غم کی وساطت سے ملا ہے

جسے اب بت سمجھتا ہوں وہ اک عمر
مرے دل میں خدا بن کے رہا ہے

ترے کھونے کا غم دیوار بن کر 
مری خوشیوں  کے رستے میں کھڑا ہے

*************

مجھ پہ کیسا یہ وقت آیا ہے
دل بھی اپنا نہیں پرایا ہے

اپنے ہاتھوں سے ہی کمایا ہے
آج تک جو بھی دکھ اٹھایا ہے

دن کو سائے سے ڈرنے والی نے
شب کے پچھلے پہر بلایا ہے 

خوش نہیں ہے مرے بنا تو بھی
میرے دل نے مجھے بتایا ہے

میں تو اس کو ولی سمجھتا ہوں 
جس نے اپنا سراغ پایا ہے

*************
سارم راجا
 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer