Latest Post
Loading...

Nusarbazi-E-Chaand Ya Fitrat Tare Ki,Kon Churai Neend Tere Chobare Ki (Razab Tabraiz)


ایک تازہ غزل آپ سب اہل_ذوق کی نظر 

نوسر بازیء چاند یا فطرت تارے کی
کون چرائے نیند تیرے چوبارے کی
جب چاہے قارون کو خستہ حال کرے
قیمت مہنگی ایک تیرے اشارے کی
نظر اتارے لال بروٹی جلوے میں
کون تبسم نین تیرے کجرارے کی
پائل کے انداز پہ ڈگمگ ڈول گئی
ایک بڑهیلی شوخ لہک اکتارے کی
بدن کنارے نظر کا رستہ عام کریں
جگنو تتلی لاج رکهیں اندهیارے کی
حرف_آخر گهول رکهے مستانوں میں
ایک رسیلی چهینٹ کمینے لارے کی
شرم الاؤ خوب سجائی دیتی ہے
اجلے روپ تیار نشست انگارے کی
سکہء رنگت اچهلے روز تجوری میں
چمکے روز دکان رزب سنیارے کی
(رزب تبریز)

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer