Latest Post
Loading...

Tum Ghairon Se Hans Hans Ke Mulaqaat Karo Ho,Aur Hum Se Wahi Zehar Bhari Baat Karo Ho


جنــابِ اقبــال عظیم

تم غیروں سے ہنس ہنس کے ملاقات کرو ھو
اور ہم ســــــے وہی زہر بھری بات کــــرو ھو

بچ بچ کــے گزر جاؤ ہو تم پاس ســـے میرے
تم تو بخدا غیروں کو بھـی مات کـــــــرو ھو

نشتر سا اُتر جاوے ھــے سینے میں ہمارے
جب ماتھے پہ بل ڈال کـــے تم بات کرو ھو

تقوے بھی بہک جاویں ہیں محفل میں تمہاری
تم اپنی ان آنکھوں ســـے کرامــات کـــرو ھو

پھولوں کی مہک آوے ھے سانسوں میں تمہاری
موتی ســے بکھر جاویں ہیں جب بات کـــرو ھو

ہم غیروں کــے آگے تمہیں کیـــــا حال بتائیں
پاس آکــے سنو دور سـے کیــــا بات کرو ھو

کیا کہہ کے پُکاریں گے تمہیں لوگ ،یہ سوچو
اقبـــال پہ تم ظلم تو دن رات کـــــــرو ھو


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer