Latest Post
Loading...

Ye Ishq Hai Ik Dariya Gehra,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech Ik Shor Mere Atraaf Macha,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech

19 Asha'ar
Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
Ye Ishq Hai Ik Dariya Gehra,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
Ik Shor Mere Atraaf Macha,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Lehron Ke Sahare Chaltey They,Lehron Par Paon Phisaltey They
Tu Tair Ke Dariya Paar Uthra, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Dil Par Mere Ik Pehra Tha Paani Se Lagao Gehra Tha
Paani Ka Bahao Taiz Howa  Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Main Apne Aap Mein Tanha Thi Main Ne Phir Aik Sada Ye Di
Aey RABBA Mujhko Paar Laga, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Dariya Ka Aik Kinara Tha,Yadon Par Teri Guzara Tha
Bas Tera Aik Sahara Tha, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Tu Ne Kion Mujhko Chorr Diya Munah Morr Liya Dil Torr Diya
Phir Mere Paas Tha Ik Rasta,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Main Sab Kuch Apna Haar Gayi Aor Ishq Ko Andar Maar Gayi
Main Phir Khud Ko Yun Samjha,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Tu Jogi Wala Phera Tha  Main Teri Thi Tu Mera Tha
Phir Duniya Bhar Se Bair Raha Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Main Janon Ye Aoqaat Meri Hai Jeet Teri Aor Maat Meri
Tha Jhoota Sachha Qaol Tera Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
 Teri Har Baat Thikaney Par,Jaisey Har Teer Nishaney Par
Tha Samney Bas Ik Dil Mera  Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
 Tu Ne Ye Dard Diya Achha,Kanton Se Daman Taar Howa
Main Toot Ke Boli Aey RABBA,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Ik Dukh Dil Ke Veeraney Mein,Kia Lena Hai Harjaney Mein
Ye Rona Hai Anjaney Ka, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Main To Phiti Sahra Sahra,Bhar Kar Banhon Mein Rait, Hawa
Ye Kia Phir Mere Saath Howa,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Ik Aalam Hai Sarshari Ka,Kia Hoga Dunyadari Ka
La Pathar Bandh Ley Bhari Sa, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Jis Pairr Pe Ghar Chirrya Ka Tha,Wo Pairr Hara Phaldar Gira
Phir Cheekh Uthi Nanhi Chirrya,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Tha Aik Tamasha Yaaron Ka,Ye Shehar Bhara Bazaaron Ka
Gham Ka Badal Kuch Yun Barsa,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Ye Sachh Hai Isko Tol Zara,Is Raaz Ko Jag Par Khol Zara
Saain Nagri Mein Bol Zara,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Ik Jazba Tha Umeed Bhi Thi,Aor Dil Mein Hasrat-e-Deed Bhi Thi
Tha Kachha Mere Paas Gharra,Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
.
Kal Dariya Paar 'AMAN' Gaya,Aor Dariya Ranjeeda
Har Maoj Pe Ye Lekha Paaya, Main Doob Gayi Dariya Ke Beech
Amanullah Khan Aman

صرف 19 اشعار
۔
 میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
.
یہ عشق ہے اک دریا گہرا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
اک شور مرے اطراف مچا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
لہروں کے سہارے چلتے تھے لہروں پر پاؤں پھسلتے تھے
تو تیر کے دریا پار اترا میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
دل پر میرے اک پہرا تھا پانی سے لگاؤ گہرا تھا
پانی کا بہاؤ تیز ہوا میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
میں اپنے آپ میں تنہا تھی میں نے پھر ایک صدا یہ دی
اے ربا مجھ کو پار لگا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
دریا کا ایک کنارا تھا، یادوں پر تیری گذارا تھا
بس تیرا ایک سہارا تھا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
تو نے کیوں مجھ کو چھوڑ دیا منہ موڑ لیا دل توڑ دیا
پھر میرے پاس تھا اک رستہ، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
میں سب کچھ اپنا ہار گئ اور عشق کو اندر مار گئی
میں نے پھر خود کو یوں سمجھا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
تو جوگی والا پھیرا تھا میں تیری تھی تو میرا تھا
پھر دنیا بھر سے بیر رہا میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
میں جانوں یہ اوقات مری، ہے جیت تری اور مات مری
تھا جھوٹا سچا قول ترا میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
تیری ہر بات ٹھکانے پر، جیسے ہر تیر نشانے پر،
تھا سامنے بس اک دل میرا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
تونے یہ درد دیا اچھا، کانٹوں سے دامن تار ہوا
میں ٹوٹ کے بولی اے ربا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
اک دکھ دل کے ویرانے میں، کیا لینا ہے ہرجانے میں
یہ رونا ہے انجانے کا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
میں تو پھرتی صحرا صحرا، بھر کر بانہوں میں ریت، ہوا
یہ کیا پھر میرے ساتھ ہوا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
اک عالم ہے سرشاری کا، کیا ہو گا دنیا داری کا
لا پتھر باندھ لے بھاری سا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
جس پیڑ پہ گھر چڑیا کا تھا، وہ پیڑ ہرا پھلدار گرا،
پھر چیخ اٹھی ننھی چڑیا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
تھا ایک تماشا یاروں کا، یہ شہر بھرا بازاروں کا
غم کا بادل کچھ یوں برسا ، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
یہ سچ ہے اس کو تول زرا، اس راز کو جگ پر کھول زرا
سائیں نگری میں بول زرا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
اک جذبہ تھا امید بھی تھی اور دل میں حسرت دید بھی تھی
تھا کچا میرے پاس گھڑا، میں ڈوب گئی دریا کے بیچ
۔
کل دریا پار امان گیا، اور دیکھا دریا رنجیدہ
ہر موج پہ یہ لکھا پایا، "میں ڈوب گئی دریا کے بیچ"
۔
امان اللہ خان امان

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer