Latest Post
Loading...

Aankhoon Mein Thakan Dhanak Badan Par Jese Shab-E-Awleen Dulhan Par (Poetess Parveen Shakir)


شاعرہ پروین شاکر
بک صد برگ صفحہ 32 33
انتخاب
عروسہ ایمان‬
آنکھوں میں تھکن دھنک بدن پر
جیسے شبء اولین دلہن پر
.
دستک ہے ہواۓ شب کی تن پر
کھلتا ہے نیا دریچہ فن پر
.
رنگوں کی جمیل بارشوں میں
اتری ہے بہار پھول بن کر
.
تھامے ہوۓ ہاتھ روشنی کا
رکھ آئی قدم زمیں گگن پر
.
گذرا تھا کوئی شریر جھونکا
سلوٹ ہے قبا ۓ یاسمن پر
.
شبنم کے لبوں پہ ناچتی ہے
چھایا ہے نشہ کرن پر
.
کھلتی نہیں برگ و گل کی آنکھیں
جادو کوئی کر گیا چمن پر
.
خاموشی کلام کر رہی ہی
جذبات کی مہر ہے سخن پر
 
Poetess Parveen Shakir
Aankhoon Mein Thakan Dhanak Badan Par
Jese Shab-E-Awleen Dulhan Par
Dastak Hai Hawa-E-Shab Ki Tan Par
Khulta Hai Naya Dareecha Fun Par
Rangoon Ki Jameel Baarishoon Mein
Utri Hai Bahaar Phool Ban Kar
Thaame Huye Hath Roshni Ka
Rakh Aai Qadam Zameen Gagan Par
Guzra Tha Koi Shareer Jhonka
Silwat Hai Qaba-E-Yaasman Par
Shabnam K Laboon Pe Nachti Hai
Chhaya Hai Ajab Nasha Kiran Par
Khulti Nahi Barag-O-Gull Ki Aankhein
Jaadoo Koi Kar Gaya Chaman Par
Khaamoshi Kalam Kar Rahi Hai
Jazbaat Ki Muhar Hai Sukhan Par..............................*

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer