Latest Post
Loading...

Husn-E-Janaan Ki Ta'areef Mumkin Nahi Afreen Afreen Tu Bhi Dekhe Agar,Tu Kahe Humnashein Afreen Afreen


Husn-E-Janaan Ki Ta'areef Mumkin Nahi Afreen Afreen
Tu Bhi Dekhe Agar,Tu Kahe Humnashein Afreen Afreen

Aisa Dekha Nahi,Khobsoorat Koi
Jism Jaise Ajanta Ki Morat Koi
Jism Jaise Nigahon Pe Jado Koi
Jism Naghama Koi,Jism Khushbo Koi
Jism Jaise Machalti Hui Ragni
Jism Jaise Mehakti Hui Chandni
Jism Jaise Keh Khilta Hua Ik Chaman
Jism Jaise Keh Soraj Ki Pehli Kiran
Jism Trasha Hua,Dilkash-O-Dilnashein
Sandalein Sandalein,Marmareen Marmareen Afreen Afreen

Chehra Ik Phool Ki Tarha Shadaab Hai
Chehra Iska Hai Ya Koi Mahtaab Hai
Chehra Jaise Ghazal,Chehra Jaan-E-Ghazal
Chehra Jaise Kali,Chehra Jase Kanval
Chehra JaiseTasavvar Bhi,Tasveer Bhi
Chehra Jaise Ik Khuwaab Bhi,Chehra Ta'abeer Bhi
Chehra Jaise Koi Alif Lailvi Dastaan
Chehra Jaise Ik Pal Yaqeen,Chehra Ik Pal Gumaan Bhi
Chehra Jaise Keh Chehra Koi Nahi
Mah-Ru Mah-Ru,Mahjabeen Mahjabeen,Afreen Afreen

Aankhein Dekhen To Main Dekhta Reh Gaya
Jaam Do Aur Dono Hi Do Aatsha
Aankhein Ya Maikadey Ke Ye Do Baab Hain
Aankhein Inko Kahon Ya Kahon Khuwaab Hain
Aankhein Neechi Hui Haya Ban Gayin
Aankhein Onchi Huyin To Dua Ban Gayin
Aankhein Uth Kar Jhukein To Ada Ban Gayin
Aankhein Jhuk Kar Uthein To Qaza Ban Gayin
Aankhein Jin Mein Hain Qaid Aasmaan-O-Zameen
Nargasein Nargasein,Suramgein Suramgein,Afreen Afreen

Zulf Janaan Ki Bhi Lambi Hai Dastaan
Zulf Ki Mere Dil Pe Hai Parchaian
Zulf  Jaise Keh Umdi Hui Ho Ghata
Zulf Jaise Keh Ho Kali Bala
Zulf Uljhe To Dunya Preshaan Ho
Zulf Suljhe To Ye Zeest Asan Ho
Zulf Bikhre Siah Raat Chhane Lagey
Zulf Lehraye To Raat Jane Lagey
Zulf Zanjeer Hai, Phir Bhi Kitni Haseen
Reshmeen Reshmeen, Anbareen Anbareen,Afreen Afreen

حسن جاناں کی تعریف ممکن نہیں
آفریں آفریں
تو بھی دیکھے اگر، تو کہے ہمنشیں
آفریں آفریں

ایسا دیکھا نہیں، خوبصورت کوئی
جسم جیسے اجنتا کی مورت کوئی
جسم جیسے نگاہوں پہ جادو کوئی
جسم نغمہ کوئی، جسم خوشبو کوئی
جسم جیسے مچلتی ہوئی راگنی
جسم جیسے مہکتی ہوئ چاندنی
جسم جیسے کہ کھلتا ہوا اک چمن
جسم جیسے کہ سورج کی پہلی کرن
جسم ترشا ہوا، دلکش و دلنشیں
صندلیں صندلیں، مرمریں مرمریں
آفریں آفریں

چہرہ اک پھول کی طرح شاداب ہے
چہرہ اسکا ہے یا کوئی ما ہتاب ہے
چہرہ جیسے غزل، جہرہ جانِ غزل
چہرہ جیسے کلی، چہرہ جیسے کنول
چہرہ جیسے تصور بھی، تصویر بھی
چہرہ اک خواب بھی، چہرہ تعبیر بھی
چہرہ کوئی الف لیلوی داستاں
چہرہ اک پل یقیں، چہرہ اک پل گماں
چہرہ جیسا کہ چہرہ کوئی نہیں
ماہ رو ماہ رو، مہ جبیں، مہ جبیں
آفریں آفریں

آنکھیں دیکھیں تو میں دیکھتا رہ گیا
جام دو اور دونوں ہی دو آتشہ
آنکھیں یا میکدے کے یہ دو باب ہیں
آنکھیں ان کو کہوں یا کہوں خواب ہیں
آنکھیں نیجی ہوئیں تو حیا بن گئیں
آنکھیں اونچی ہوئیں تو دعا بن گئیں
آنکھیں اٹھ کر جھکیں تو ادا بن گئیں
آنکھیں جھک کر اٹھیں تو قضا بن گئیں
آنکھیں جن میں ہیں قید آسمان و زمیں
نرگسیں نرگسیں، سرمگیں سرمگیں
آفریں آفریں

زلف جاناں کی بھی لمبی ہے داستاں
زلف کی میرے دل پر ہیں پرچھائیاں
زلف جیسے کہ امڈی ہوئی ہو گھٹا
زلف جیسے کہ ہو کوئی کالی بلا
زلف الجھے تو دنیا پریشان ہو
زلف سلجھے تو یہ زیست آسان ہو
زلف بکھرے سیاہ رات چھانے لگے
زلف لہرائے تو رات جانے لگے
زلف زنجیر ہے، پھر بھی کتنی حسیں
ریشمیں ریشمیں، عنبریں عنبریں
آفریں آفریں

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer