Latest Post
Loading...

Qismat Se Bhi Kuch Sawa Diya Hai Baarish Ne Hamein Mila Diya Hai


شاعرہ پروین شاکر
بک انکار صفحہ 127
انتخاب
عروسہ ایمان
قسمت سے بھی کچھ سوا دیا ہے
بارش نے ہمیں ملا دیا ہے
.
دیکھی ہے میری اداسی اس نے
اور دیکھ کے مسکرا دیا ہے
.
اب تو مجھے صبر آ گیا تھا
یہ کس نے مجھے رلا دیا ہے؟
.
وہ چاہے تو راستہ بدل لے
میں نے تو دیا جلا دیا ہے
.
اس رونقء بزم نے تو میری
تنہائی کو بھی سجا دیا ہے
.
وہ پل کہ سلگ اٹھا ہے ملبوس
اور اس نے دیا بجھا دیا ہے

Poetess Parveen Shakir

Qismat Se Bhi Kuch Sawa Diya Hai

Baarish Ne Hamein Mila Diya Hai

Dekhi Hai Meri Udasi Us Ne

Aur Dekh K Muskura Diya Hai

Ab To Mujhe Sabar Aa Gaya Tha

Ye Kis Ne Mujhe Rula Diya Hai?

Wo Chahe To Rasta Badal Le

Main Ne To Diyya Jala Diya Hai

Us Ronaq-E-Bazam Ne To Meri

Tanhaai Ko Bhi Saja Diya Hai

Wo Pal Keh Sulag Utha Hai Malboos

Aur Us Ne Diyya Bujha Diya Hai..............................*

.

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer