Latest Post
Loading...

Muflis Ka Chishm Ashna Hai Nam Shanaas Hai,Tum Dil Kaho Jese Wo Bhikaari Glas Hai (Razab Tabraiz)


مفلس کا چشم آشنا
ہے نم شناس ہے
تم دل کہو جسے وہ
بهکاری گلاس ہے

فاقہ کشی فردوس کی
کوئی باوضو سی حور
میں غیب گو ہرگز
نہیں لیکن قیاس ہے

اس زیست کو پڑها
تو پڑها رب کا صحیفہ
یہ کل کی صحافت ہے
ہفت رنگ اساس ہے

جیوں بزم_ہوس اچهلا
ہو کوئی معتبر اسم
بے لذتی گناہوں پہ
یوں دل اداس ہے

غربت کٹہرے کون
اٹهائے حق کی شہادت
جو چپ کی مالا سمرے
وہی دیو داس ہے

ملتے ہیں اک قطار میں
سب آدهی شب کے سیپ
توبہ جہاں گماں بندهی
وہیں وشواس ہے

فرہاد سے نسبت نہیں
پر سجدہ گاہ رزب
راوی ہے ایک آنکھ
تو دوجی بیاس ہے
(رزب تبریز)

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer