Latest Post
Loading...

Hai Yahi Meri Namaz,Hai Yahi Mera Wazo Meri Nawaon Mein Hai Mere Jigar Ka Laho ( Allama Iqbal )


Allama Muhammad Iqbal offer prayer in the Masjid Qoba ( Cordoba ) January 1931.

دعا

(مسجد قرطبہ ميں لکھی گئی)


ہے يہی ميری نماز ، ہے يہی ميرا وضو
ميری نواؤں ميں ہے ميرے جگر کا لہو

صحبت اہل صفا ، نور و حضور و سرور
سر خوش و پرسوز ہے لالہ لب آبجو

راہ محبت ميں ہے کون کسی کا رفيق
ساتھ مرے رہ گئی ايک مری آرزو

ميرا نشيمن نہيں درگہ مير و وزير
ميرا نشيمن بھی تو ، شاخ نشيمن بھی تو

تجھ سے گريباں مرا مطلع صبح نشور
تجھ سے مرے سينے ميں آتش 'اللہ ھو'

تجھ سے مری زندگی سوز و تب و درد و داغ
تو ہی مری آرزو ، تو ہی مری جستجو

پاس اگر تو نہيں ، شہر ہے ويراں تمام
تو ہے تو آباد ہيں اجڑے ہوئے کاخ و کو

پھر وہ شراب کہن مجھ کو عطا کہ ميں
ڈھونڈ رہا ہوں اسے توڑ کے جام و سب

چشم کرم ساقيا! دير سے ہيں منتظر
جلوتيوں کے سبو ، خلوتيوں کے کدو

تيری خدائی سے ہے ميرے جنوں کو گلہ
اپنے ليے لامکاں ، ميرے ليے چار سو!

فلسفہ و شعر کی اور حقيقت ہے کيا
حرف تمنا ، جسے کہہ نہ سکيں رو برو


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer