Latest Post
Loading...

Faqeera Aaye Sada Kar Chalay Mian Khush Raho Hum Dua Kar Chalay



شاعر میر تقی میر
بک انتخاب کلام میر

صفحہ 467
غزل 469
قافیہ ر

ردیف ے

.
انتخاب اور ٹائپ

فاروقی.
54

فقیرانہ آۓ صدا کر چلے
میاں خوش رہو ہم دعا کر چلے

جو تجھ بن نہ جینے کو کہتے تھے
سو اس عہد کو اب وفا کر چلے

شفا اپنی تقدیر ہی میں نہ تھی
کہ مقدور تک تو دوا کر چلے

وہ کیا چیز ہے آہ جس کے لیے
ہر اک چیز سے دل اٹھا کر چلے

کوئی نا امیدا نہ کرتے نگاہ
سو تم ہم سے منھ بھی چھپا کر چلے

بہت آرزو تھی گلی کی تیری
سو یاں سے لہو میں نہا کر چلے

دکھائی دیۓ یوں کہ بے خود کیا
ہمیں آپ سے بھی جدا کر چلے

نہ دیکھا غم ۓ دوستاں شکر ہے
ہمیں داغ اپنا دکھا کر چلے


Poet Meer Taqi Meer
Faqeera Aaye Sada Kar Chalay
Mian Khush Raho Hum Dua Kar Chalay
Jo Tujh Bin Na Jeenay Ko Kehtay Thay Hum
So Is Ehad Ko Ab Wafa Kar Chalay
Shafa Apni Taqdeer Hi Mein Na Thi
Keh Maqdoor Tak To Dawa Kar Chalay
Wo Kaya Cheez Hai Aah Jis K Liye
Har Ik Cheez Say Dil Utha Kar Chalay
Koi Na Umeeda Na Kartay Nigaah
So Tum Hum Say Munh Bhi Chhupa Kar Chalay
Bohat Aarzoo Thi Galli Ki Teri
So Yaan Se Lahoo Mein Naha Kar Chalay
Dikhaai Diye Yoon Ke Bay Khud Kiya
Hamein Aap Say Bhi Juda Kar Chalay
Na Daikha Gham-E-Dostaan Shukar Hai
Hamein Daagh Apna Dikha Kar Chalay..................!

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer