Latest Post
Loading...

Kofat Se Jaan Lab Pe Aai Hai Hum Ne Kaya Chot Dil Pe Khaai Hai


شاعر میر تقی میر
بک انتخاب کلام میر
قافیہ آئی کھائی بڑھائی
ردیف ہے
صفحہ 788

غزل نمبر 793

انتخاب اور ٹائپ
فاروقی.54

کوفت سے جان لب پہ آئی ہے
ہم نے کیا چوٹ دل پہ کھائی ہے

لکھتے رقعہ لکھے گۓ دفتر
شوق نے بات کیا بڑھائی ہے

آرزو اس بنلد و بالا کی
کیا بلا میرے سر پہ لائی ہے

دیدنی ہے شکستگی دل کی
کیا عمارت غموں نے ڈھائی ہے

یاں ہوۓ خاک سے برابر ہم
واں وہی ناز و خود نمائی ہے

مرگ مجنوں سے عقل گم ہے میر
کیا دوانے نے موت پائی ہے


Poet Meer Taqi Meer

Kofat Se Jaan Lab Pe Aai Hai

Hum Ne Kaya Chot Dil Pe Khaai Hai

Likhte Raqia Likhe Gaye Daftar

Shoq Ne Baat Kaya Barrhaai Hai

Aarzoo Us Bulnd-O-Bala Ki

Kaya Bala Mere Sar Pe Laai Hai

Deedni Hai Shikstgi Dil Ki

Kaya Imaarat Ghamoon Ne Dahaai Hai

Yaan Huye Khak Se Baraabr Hum

Waan Wahi Naaz-O-Khud Numaai Hai

Marag-E-Majnoon Se Aqal Gum Hai Meer

Kaya Diwaane Ne Muat Paai Hai.............!


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer