Latest Post
Loading...

Munh Taka Hi Kare Hai Jis Tis Ka Herti Hai Ye Aaina Kis Ka


شاعر میر تقی میر
بک کلام میر
صفحہ 34 35
قافیہ جس تس کس
ردیف الف

غزل نمبر 12
.
انتخاب اور ٹائپ فاروقی.54
.
منھ تکا ہی کرے ہے جس تس کا
حیرتی ہے یہ آئینہ کس کا
شام سے کچھ بجھا سا رہتا ہے
دل ہوا ہے چراغ مفلس کا
تھے برے مغبچوں کے تیور لیکن
شیخ مے خانے سے بھلا کھس کا
داغ آنکھوں سے کھل رہے ہیں سب
ہاتھ دستہ ہوا ہے نرگس کا
فیض اے ابر ۓ چشم تر سے اٹھا
آج دامن وسیع ہے اس کا
ہجر کم ظرف ہے بسان ۓ حباب
کاسہ لیس اب ہوا ہے تو جس کا
تاب کس کو جو حال ۓ میر سنے
حال ہی اور کچھ ہے مجلس کا،،،،،

Poet Meer Taqi Meer
Munh Taka Hi Kare Hai Jis Tis Ka
Herti Hai Ye Aaina Kis Ka
Sham Se Kuch Bujha Sa Rehta Hai
Dil Huwa Hai Charaagh Muflis Ka
Thay Bure Mubghachoon K Tewar Lekin
Shaikh May Khane Se Bhala Khis Ka
Dagh Aankhoon Se Khul Rahe Hain Sub
Haath Dasta Huwa Hai Nargis Ka
Faiz Ay Abr-E-Chasham Tar Se Utha
Aaj Daman Wasee Hai Us Ka
Hijar Kam Zaraf Hai Basan-E-Hibaab
Kasa Lais Ab Huwa Hai Too Jis Ka
Taab Kis Ko Jo Haal-E-Meer Sune
Haal Hi Aur Kuch Hai Majlis Ka,,,,,,,!

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer