Latest Post
Loading...

Ranj Kheenche Thay Dagh Dikhaye Thay Dil Ne Sadmay Barre Uthaye Thay


شاعر میر تقی میر
بک انتخاب کلام میر
صفحہ 399

غزل نمبر 400
قافیہ کھاۓ اٹھاۓ آۓ دکھاۓ ساۓ لاۓ

ردیف ے

.
انتخاب اور ٹائپ
فاروقی.54
.
رنج کھینچے تھے داغ کھاۓ تھے
دل نے صدمے بڑے اٹھاۓ تھے
.
پاس ناموس عشق تھا ورنہ
کتنے آنسو پلک تک آۓ تھے
.
وہی سمجھا نہ ورنہ ہم نے تو
زخم چھاتی کے سب دکھاۓ تھے
.
اب جہاں آفتاب میں ہم ہیں
یاں کبھو سرو و گل کے ساۓ تھے
.
میر صاحب رلا گۓ سب کو
کل وے تشریف یاں بھی لاۓ تھے


Poet Meer Taqi Meer

Type
By

*_FAROOQI.54_*


Ranj Kheenche Thay Dagh Dikhaye Thay

Dil Ne Sadmay Barre Uthaye Thay

Pas-E-Namoos-E-Ishq Tha Warna

Kitne Aansoo Palak Tak Aaye Thay

Wahi Samjha Na Warna Hum Ne To

Zakham Chhaati K Sub Dikhaye Thay

Ab Jahan Aaftaab Mein Hum Hain

Yaan Kabhoo Saro-O-Gul K Saye Thay

MEER Sahib Rula Gaye Sub Ko

Kal Way Tashreef Yaan Bhi Laye Thay..................!


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer