Latest Post
Loading...

Saaqi Ki Har Nigaah Pe Bal Kha Ke Pii Gaya Lehron Se Khelta Hua Lehra Ke Pii Gaya


ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا کہ پی گیا
لہروں سے کھیلتا ہوا لہرا کہ پی گیا
بےکیفیوں کے خوف سے گبھرا کہ پی گیا
توبہ کو توڑ تاڑ کہ ٹھرّا کہ پی گیا
زاھد یہ میری شوخیءرندانہ دیکھنا
رحمت کو باتوں باتوں میں بہلا کہ پی گیا
سر مستیءازل مجھے جب یاد آ گئ
دنیا ء اعتبار کو ٹھکرا کہ پی گیا
اے رحمتِ تمام میری ہر خطا معاف
میں انتہاء شوق میں گبھرا کہ پی گیا
پیتا بغیر عزن کہ یہ کب تھی میری مجال
در پردہ چشمِ یار کی شہہ پا کہ پی گیا
اس جانِ میکدہ کی قسم بار ہا جگر
کل عالمِ بساط پہ میں چھا کہ پی گیا

Saaqi Ki Har Nigaah Pe Bal Kha Ke Pii Gaya

Lehron Se Khelta Hua Lehra Ke Pii Gaya

Be-Kaifion Ke Khaof Se Ghabra Ke Pii Gaya

Taoba Ko Tod Tad Ke Thar'ra Ke Pii Gaya

Zahi Ye Meri Shoukh-e-Rindana Dekhna

Rehmat Ko Baton Baton Me Behla Ke Pii Gaya

Sar Masti-e-Azal Mujhe Jab Yaad Aa Gayi

Dunya-e-Itbaar Ko Thukra Ke Pii Gaya

Aey Rehmat-e-Tamaam Meri Aik Khata Muaf

Main Inteha-e-Shouq Mein Ghabra Ke Pii Gaya

Piita Baghair A'azan Ke Ye Kab Thi Meri Majaal

Dar-Parda Chisham Yaar Ki Sheh Paa Ke Pii Gaya

Iss Jaan-e-Maikada Ki Qasam Baarha Jigar

Kal Alam-e-Basat Pe Main Chha Ke Pii Gaya

 


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer