Latest Post
Loading...

Wo Jab Se Shehr Kharabaat Ko Rawana Hoa Barah-e-Rast Mulaqaat Ko Zamana Hoa


وہ جب سے شہر خرابات کو روانہ ہُوا
براہِ راست مُلاقات کو زمانہ ہُوا

Wo Jab Se Shehr Kharabaat Ko Rawana Hoa

Barah-e-Rast Mulaqaat Ko Zamana Hoa

وہ شہر چھوڑ کے جانا تو کب سے چاہتا تھا
یہ نوکری کا بُلاوا تو اِک بہانہ ہوا

 Wo Shehr Chod Ke Jana To Kab Kab Se Chahta Tha

Ye Nokri Ka Bulawa Tou Ik Bahana Hoa

خُدا کرے تری آنکھیں ہمیشہ ہنستی رہیں
یہ آنکھیں جن کو کبھی دُکھ کا حوصلہ نہ ہُوا

Khuda Kare Teri Aankhein Hamesha Hansti Rahein

Ye Aankhein Jinko Kabhi Dukh Ka Hosla Na Hoa

کنارِ صحن چمن سبز بیل کے نیچے
وہ روز صبح کا مِلنا تو اَب فسانہ ہُوا

Kanar-e-Sehn Chaman Sabz Bail Ke Neechay

Wo Roz Subah Ka Milna Tou Ab Fasana Hoa

میں سوچتی ہوں کہ مُجھ میں کمی تھی کِس شے کی
کہ سب کا ہوکے رہا وہ، بس اِک مرا نہ ہُوا

Main Sochti Hon Keh Mujh Mein Kami Thi Kis Shay Ki

Keh Sab Ka Ho Ke Raha Wo,Bas Ik Mera Na Hoa

کِسے بُلاتی ہیں آنگن کی چمپئی شامیں
کہ وہ اَب اپنے نئے گھر میں بھی پرانا ہُوا

Kese Bulati Hain Aangan Ki Jamai Shamein 

Keh Wo Ab Apne Nai Ghar Mein Bhi Purana Hoa

دھنک کے رنگ میں ساری تو رنگ لی میں نے
اور اب یہ دُکھ ، کہ پہن کر کِسے دِکھانا ہُوا

Dhanak Ke Rang Mein Saari Tou Rang Li Main Ne

Aur Ab Ye Dukh ,Keh Pehn Kar Kise Dikhana Hoa

میں اپنے کانوں میں بیلے کے پھُول کیوں پہنوں
زبانِ رنگ سے کِس کو مُجھے بُلانا ہُوا

Main Apne Kanon Mein Baily Ke Phool Kion Pehnon

Zuban-e-Rang Se Kis Ko Mujhe Bulana Hoa

پروین شاکر

Poetess:Parveen Shakir


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer