Latest Post
Loading...

Zindagi Se Nazar Milao Kabhi Haar Ke Baad Muskurao Kabhi


زندگی سے نظر ملاؤ کبھی
ہار کے بعد مسکراؤ کبھی

ترکِ اُلفت کے بعد اُمیدِ وفا
ریت پر چل سکی ہے ناؤ کبھی

اب جفا کی صراحتیں بیکار
بات سے بھر سکا ہے گھاؤ کبھی

شاخ سے موجِ گُل تھمی ہے کہیں
ہاتھ سے رک سکا بہاؤ کبھی

اندھے ذہنوں سے سوچنے والو
حرف میں روشنی ملاؤ کبھی

بارشیں کیا زمیں کے دُکھ بانٹیں
آنسوؤں سے بجھا الاؤ کبھی

اپنے اسپین کی خبر رکھنا
کشتیاں تم اگر جلاؤ کبھی

(پروین شاکر)

Zindagi Se Nazar Milao Kabhi

Haar Ke Baad Muskurao Kabhi

Tark-e-Ulfat Ke Baad Umeed-e-Wafa

Ret Par Chal Saki Hai Nav Kabhi

Ab Jafa Ki Sarahatein Be-Kaar

Baat Se Bhar Saka Hai Ghav Kabhi

Shakh Se Moj-e-Gul Thami Hai Kahein

Haath Se Ruk Saka Bahav Kabhi

Andhe Zehnon Se Sochne Walo

Harf Mein Roshni Milao Kabhi

Barshein Kia Zameen Ke Dukh Bantein

Aansoun Se Bhuja Alav Kabhi

Apne Spain Ki Khabar Rakhna

Kashtian Tum Agar Jalav Kabhi

(Parveen Shakir)

 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer