Latest Post
Loading...

Ik Baar Muskura Do (Munni Begum)



سنگر منی بیگم

انتخاب فاروقی_54

فردوس جھوم اٹھے
فضا مسکرا اٹھے
تم جو مسکراؤ تو
خدا مسکرا اٹھے

اک بار مسکرا دو
اک بار مسکرا دو
اک بار مسکرا دو

افسانہ ۓ چمن کا عنوان ہی بدل دو
پھولوں کا سر کچل دو
کلیوں کا دل مسل دو

آکاش کی جوانی
بادل میں منہہ چھپاۓ
مہتاب ڈوب جاۓ
تاروں کو نیند آۓ

زہرا جبیں پری رکھ
تمثیل ماہ ؤ انجم
آنکھیں شراب عادی
جزبات میں تلاتم

کھلتے ہوۓ لبوں پر
ہنستا ہوا ترانہ
اک دل نواز پیکر
خاطر میں ہے زمانہ

لب ہاۓ احمریں پر
نکھری ہوئی ہے لالی
یے ہلکی ہلکی سرخی
تصویر ہے شفق کی 
آوارہ شوخ زلفیں
رخسار چومتی ہیں
رخسار چومتی ہیں
بے خود ہے گھومتی ہیں

ہو زیست کا سہارا
تم موج میں کنارا
لیکن سنو خدارا
اک بار مسکرا دو
جلمی

اک بات تم سے پوچھوں؟
بولو جواب دو گے؟
یہ حسن یہ جوانی
سرکار کیا کرو گے؟

ہونٹوں کی مسکراہٹ
بیچو تو خرید لوں گا
منظور ہو تو بولو
انمول دام دوں گا

لیکن اک بار مسکرا دو
اک بار مسکرا دو
اک بار مسکرا او
جلللللللممممممی

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer