Latest Post
Loading...

Jo Ashk Palkon Pe Aa Gaye Thay Sanbhal Dete Jo Zabt Karna Hi Tha Tou Usko Kamal Dete


شاعرہ فاخرہ بتول

جو اشک پلکوں پہ آ گۓ تھے سنبھال دیتے

جو ضبط کرنا ہی تھا تو اس کو کمال دیتے

تمہارے آنگن میں فلک سے چاند اتر کے آتا

تم اپنے دل کی زمین کو جو اجال دیتے

محبتوں کے سرور سے آشنائی ہوتی

جو واہموں کو تم اپنے دل سے نکال دیتے

مری طرح سے جو دل گنوا کے بھی جی رہا ہو

تم اس طرح کی جہاں میں کوئی تو مثال دیتے

گلاب چنتے ہوۓ گلابی نہ ہاتھ کرتے

جو سارے کانٹوں کو میری جھولی میں ڈال دیتے

وہ جس میں کلیوں سے آکے بھنورے چرائیں خوشبو

وصال کا بھی وہ دن مہینہ وہ سال دیتے

بتول دامن کو جو بھگوتے ہی بجھ گۓ ہیں

ستارے پلکوں پہ روشنی بے مثال دیتے

Poetess:Fakhra Batool

Jo Ashk Palkon Pe Aa Gaye Thay Sanbhal Dete

Jo Zabt Karna Hi Tha Tou Usko Kamal Dete

Tumhare Angan Mein Falak Se Chaand Utar Ke Aata

Tum Apne Dil Ki Zameen Ko Jo Ujaal Dete

Muhabbaton Ke Suroor Se Aashnayi Hoti

Jo Wahmon Ko Tum Apne Dil Se Nikaal Dete

Meri Tarah Se Jo Dil Ganwa Ke Bhi Jee Raha Ho

Tum Istarah Ki Jahan Mein Koi Tou Misaal Dete

Gulaab Chunty Hoe Gulaabi Na Haath Karte

Jo Saare Kanton Ko Meri Jholi Mein Daal Dete

Wo Jis Mein Kalion Se Aa Ke Bhunwre Churaein Khushbo

Wasaal Ka Bhi Wo Din Maheena Wo Saal Dete

"Batool" Daman Ko Jo Bhagoty Hi Bujh Gaye Hain

Sitare Palkon Pe Roshni Be-Misaal Dete

 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer