Latest Post
Loading...

Main Dastakein De Raha Hon Sab Log Band Kamron Mein Sun Rahe Hain,Nikal Ke Bahir Bhala December Ki Sard Raton Mein Kon Aaye




آنس معین کے منتخب اشعار

ان لوگوں کا جھک کر ملنا اور برا ہے
بڑے پرندوں کی نیچی پرواز سے ڈرنا
*****
رہتا ہوں جس زمیں پہ وہی اوڑھ لوں گا میں
جائے اماں اک اور بھی ہوتی ہے گھر کے بعد
*****
انس تم بھی سامنے رکھ کر آئینہ 
 زور سے اک آواز لگاؤ، لوٹ آ
*****
خالی ہے مکاں پھر بھی دیے جاتے ہو دستک
کیا روزنِ دیوار سے اندر نہیں دیکھا؟
*****
میری قامت سے ڈر نہ جائیں لوگ
میں ہوں سورج مجھے دیا لکھنا
*****
 جیون کو دکھ ، دکھ کو آگ اور آگ کو پانی کہتے
بچے لیکن سوئے ہوئے تھے کس سے کہانی کہتے
*****
لہو لہو مری آنکھیں، اداس اداس فضا
نجانے کون سا موسم اترنے والا ہے
*****
حیرت سے جو یوں مری طرف دیکھ رہے ہو
لگتا ہے کبھی تم نے سمندر نہیں دیکھا
*****
میں اپنی ذات کی تنہائی میں مقید تھا
پھر اِس چٹان میں اک پھول نے شگاف کیا
*****
جھیلوں کی طرح سب کے ہی چہروں پہ ہے سکوت
کتنا یہاں پہ کون ہے گہرا نہیںِ کھلا

*****
ہماری مسکراہٹ پر نہ جانا
دیا تو قبر پر بھی جل رہا ہے

*****
اندر کی دنیا سے ربط بڑھاؤ آنس
باہر کھلنے والی کھڑکی بند پڑی ہے
*****
عجب انداز سے یہ گھر گرا ہے
میرا ملبہ مرے اوپر گرا ہے
*****
یاد ہے آنسؔ پہلے تم خود بکھرے تھے
آئینے نے تم سے بکھرنا سیکھا ہے
*****
 چپ رہ کر اظہار کیا ہے کہہ سکتے تو آنسؔ
ایک علیحدہ طرزِ سخن کا تجھ کو بانی کہتے
*****
بدن کی اندھی گلی تو جائے امان ٹھہری
میں اپنے اندر کی روشنی سے ڈرا ہوا ہوں
*****
دامن بھی دریدہ ہے مرا ہاتھ بھی زخمی
شاخوں پہ گلابوں کے سوا اور بھی کچھ ہے
*****
ممکن ہے کہ صدیوں بھی نظر آئے نہ سورج
اس بار اندھیرا مرے اندر سے اٹھا ہے
*****
مجھ سے پوچھو ، پیڑ سے پتے کس نے چھینے
میں نے ہوا کے قدموں کی آواز سنی ہے
*****
سوچ رہے ہو؟ سوچو!! لیکن بول نہ پڑنا
دیکھ رہے ہو شہر میں کتنا سناٹا ہے
*****
آخر کو روح توڑ ہی دے گی حصارِ جسم
کب تک اَسِیر خوشبو رھے گی گلاب میں
*****
میں دستکیں دے رھا ھوں سب لوگ بند کمروں میں سن رھے ھیں
نکل کے باھر بھلا دسمبر کی سرد راتوں میں کون آئے 
********************************************

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer