Latest Post
Loading...

Dekha Tha Aik Phool Muhabbat Ke Baagh Mein,Tab Se Hai Izteraab Dil Daagh Daagh Mein

شاعرہ نجمہ شاہین کھوسہ 

بوک میں آنکھیں بند رکھتی ہوں

صفحہ 202

انتخاب اجڑا دل

دیکھا تھا ایک پھول محبت کے باغ میں

تب سے ہے اضطراب دل داغ داغ میں

میرا وجود لالا صحرا سے کم نہیں

نکلی ہو آج خود ہی میں اپنے سراغ میں

مانوں گی ہار ظلمت ۓ شب سے نہ میں کبھی

جب تک روشنی ہے اس دل کے چراغ میں

فانی جہان کی ہے ہر اک شے فنا مآل

بیکار ہے یے حرص و ہوس اس دماغ میں

شاہین یے بھی تشنا لبوں ہی میں بانٹ دو

تھوڑی سی مۓ پڑی ہے جو تیرے ایاغ میں

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer