Latest Post
Loading...

Saavan Ki Bheegi Raaton Mein

ساون کی بھیگی راتوں میں
جب پھول کھلیں برساتوں مٰیں
جب چھیڑیں سکھیاں باتون میں
مینوں یاداں تیریاں آؤندیاں نیں
دل کو پکڑ رہ جاتی ھوں
پوچھ نہ کیسے شرماتی ھوں
ساری باتیں سن لیتی ھوں
آدھی باتیں کہہ جاتی ھوں
خوشبو نہیں ملتی کلیوں میں
کوئی رنگ نہیں رنگ رلیوں میں
گاؤں کی سونی گلیوں میں
مینوں یاداں تیریاں آؤندیاں نیں
اپنا دکھڑاکہہ نہیں سکتی
اور جدائ سہہ نہیں سکتی
کچے گھڑے پہ بہہ نہیں سکتی
بیٹھ کہ راتیں سہہ نہیں سکتی
میں پہن کے پائل پاؤں میں
تیرا رستہ دیکھوں گاؤں میں
پیپل کی ٹھنڈی چھاؤں میں
مینوں یاداں تیریاں آؤندیاں نیں
کب تک تم پردیس رھو گے
آؤگے نہ خط لکھو گے
میں گھٹ گھٹ کہ جاں دیدوں گی
پھر تم کس کو جان کہو گے ؟
ڈھنڈوگے جنگل میلے میں
ھر بستی میں ھر بیلے میں
گاؤگے یہی اکیلے میں
مینوں یاداں تیریاں آؤندیاں نیں
۔مینوں یاداں تیریاں آؤندیاں نیں

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer