Latest Post
Loading...

Ban Ke Mera Parwaana Aaye Ga Akbar Khana


شاعر قتیل شفائی
بک دھنک صفحہ 75 76
گلوکارہ مالا فلم فرنگی سن 1964
انتخاب اجڑا دل
ہو ہو بن کےمیرا  پروانہ آۓ گا اکبر خاناں
کہہ دوں گی دلبر جاناں پخیر راغلے
یا قربان یا قربان
جب ریشمی رومال کو وہ دور سے لہراۓ گا
قدموں سے پہلے دل میرا اڑ کر صنم تک جاۓ گا
چھیڑے گا دل دیوانہ الفت بھرا افسانہ
کہہ دوں گی دلبر جاناں پخیر راغلے
یا قربان یا قربان
شانوں پے بکھراؤں گی میں زلفوں کو سنبل کی طرح
اس گل بدن کے سامنے چہکوں گی بلبل کی طرح
اپنوں سے کیا شرمانا میں دے کے دل کا نظرانہ
کہہ دوں گی دلبر جاناں پخیر راغلے
یا قربان یا قربان
اس نے ہے تڑپایا مجھے اب اس کو تڑپاؤں گی میں
وہ پاؤں میں گر جاۓ گا تو مان بھی جاؤں گی میں
جب وہ نہیں بیگانہ پھر کیا اسے تڑپانہ
کہہ دوں گی دلبر جاناں پخیر راغلے
یا قربان یا قربان

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer