Latest Post

It was still dark, when standing by my pillow The moon said to me 'Waken, dawn is here A PRISON DAYBREAK

زنداں کی ایک صبح
رات باقی تھی ابھی جب سرِ بالیں آکر
چاند نے مجھ سے کہا۔۔۔“جاگ سحر آئی ہے
جاگ اس شب جو مئے خواب ترا حصہ تھی
جام کے لب سے تہ جام اتر آئی ہے“
عکسِ جاناں کو ودع کرکے اُٹھی میری نظر
شب کے ٹھہرے ہوئے پانی کی سیہ چادر پر
جابجا رقص میں آنے لگے چاندی کے بھنور
چاند کے ہاتھ سے تاروں کے کنول گر گر کر
ڈوبتے، تیرتے، مرجھاتے رہے، کھلتے رہے
رات اور صبح بہت دیر گلے ملتے رہے
It was still dark, when standing by my pillow
The moon said to me 'Waken, dawn is here:
The share poured for you of this night's wine of sleep
Has sunk from brim to bottom of the cup,'
--I took farewell of my love's image, and gazed
Out over the dim coverlet of the night's
Slow-ebbing flood, where here and there a dance
Of argent ripples flickered, while the stars,
Like lotus-petals fallen from the moon's hand,
Came sinking, floating, fading, opening out;
Daybreak and night lay long in each other's arms.
صحنِ زنداں میں رفیقوں کے سنہرے چہرے
سطحِ ظلمت سے دمکتے ہوئے ابھرے کم کم
نیند کی اوس نے ان چہروں سے دھو ڈالا تھا
دیس کا درد، فراقِ رخِ محبوب کا غم
Golden in the jail-yard my comrades' features
Slowly emerging, a glow against the darkness,
Washed clean by oblivion's dews of brooding grief
For loved face lost, or care for native land;--
دور نوبت ہوئی، پھرنے لگے بیزار قدم
زرد فاقوں کے ستائے ہوئے پہرے والے
اہلِ زنداں کے غضبناک ، خروشاں نالے
جن کی باہوں میں پھرا کرتے ہیں باہیں ڈالے
لذتِ خواب سے مخمور ہوائیں جاگیں
جیل کی زہر بھری چور صدائیں جاگیں
دور دروازہ کھلا کوئی، کوئی بند ہوا
دور مچلی کوئی زنجیر ، مچل کر روئی
دور اُترا کسی تالے کے جگر میں خنجر
A far-off drum sounding, a shuffle of feet
Of pallid famished guards starting their rounds,
And arm in arm and on and on with them
The angry din of prisoner and complaint.
Light winds still drunk with dream-delights are stirring;
With them, ghostly, a prison's bodeful noises:
سر پٹکنے لگا رہ رہ کے دریچہ کوئی
گویا پھر خواب سے بیدار ہوئے دشمنِ جاں
سنگ و فولاد سے ڈھالے ہوئے جنات ِ گراں
جن کے چنگل میں شب و روز ہیں فریاد کناں
میرے بیکار شب و روز کی نازک پریاں
اپنے شہپور کی رہ دیکھ رہی ہیں یہ اسیر
جس کے ترکش میں ہیں امید کے جلتے ہوئے تیر
A distant door opens, another shuts,
A distant chain scrapes sullenly, scrapes and sobs,
Far off a dagger plunges in some lock's vitals,
A shutter rattles, rattles, beating its head.
My mortal foes have risen again from sleep,
Grim monsters welded out of stone and steel,
Fast in whose talons daylong and nightlong wail
Those gossamer spirits, my empty nights and days,
Captives watching and waiting for their prince
Whose quiver holds the burning arrows of hope.

فیض احمد فیض
Faiz Ahmad Faiz


Post a Comment

Toggle Footer