Latest Post
Loading...

Roop Ka Ghuroor Hai Keh Tooty Aaina



روپ کا غرور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ
آج پھر فتور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

آئینے کی آرزو
"ہو خیر یار کی"
یار کو منظور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

اناللہ پڑهتے ہوئے
آئینے کے وه
حلق سے اتنا دور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

اک دعوت_نقاب پہ
نقاب کھینچ کر
اب آئینہ مجبور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

تھکان_دوستی میں
دونوں بازو موڑتی
انگڑائی ایسی چور
ہے کہ ٹوٹے آئینہ

شوخیوں کی بھینٹ
ہوئی آئینے کی تاب
تاب کا دستور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

ہنسی کی بات بات
میں نئی سیاستیں
مسکان کا منشور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

آنکھ ہے کہ چاہتی
ہے دیکھتی رہے
ہاتھ میں انگور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

پسینے کی قمیض سے
ملی بھگت کے بعد
بدن یوں شرابور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ

رزب
سے پوچھتی ہے
وہ سوالیہ نظر
میرا کیا قصور ہے
کہ ٹوٹے آئینہ
(رزب تبریز)


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer