Latest Post
Loading...

Meri Aankhon Mein Aansoo Peghalta Raha,Chaand Jalta Raha Teri Yadon Ka Soraj Nikalta Raha,Chaand Jalta Raha

Poet:Wasi Shah

Meri Aankhon Mein Aansoo Peghalta Raha,Chaand Jalta Raha

Teri Yadon Ka Soraj Nikalta Raha,Chaand Jalta Raha

Koi Bistar Pe Shabnam Lapaitey Hoe Khuwab Dekha Kiye

Koi Yadon Mein Karwat Badalta Raha,Chaand Jalta Raha

Meri Aankhon Mein Campus Ki Sab Sa'atein Jagti Hain Abhi

Nihr Par Tu Mere Saath Chalta Raha, Chaand Jalta Raha

Main To Ye Janta Hon Keh Jis Shab Mujhe Chorrh Kar Tum Gaye

Aasmanon Se Shola Nikalta Raha,Chaand Jalta Raha

Raat Aayi To Kia Kia Kareshmey Hoe Tujh Ko Maloom Hai

Teri Yaadon Ka Soraj Ubalta Raha,Chaand Jalta Raha

 Raat Bhar Meri Palkon Ki Dahleez Par Khuwab Girtey Rahy

Dil Tarrapta Raha,Haath Malta Raha,Chaand Jalta Raha

Ye December Keh Jis Mein Karri Dhoop Bhi Meethi Lagney Lagey

Tum Nahi To December Sulagta Raha,Chaand Jalta Raha

Aaj Bhi Wo Taqadus Bhari Raat Mehki Hoi Hai "WASI"

Main Kisi Mein,Koi Mujh Mein Dhalta Raha, Chaand Jalta Raha


وصی شاہ
میری آنکھوں میں آنسو پگھلتا رہا، چاند جلتا رہا
تیری یادوں کا سورج نکلتا رہا، چاند جلتا رہا
کوئی بستر پہ شبنم لپیٹے ہوئے خواب دیکھا کیے
کوئی یادوں میں کروٹ بدلتا رہا، چاند جلتا رہا
میری آنکھوں میں کیمپس کی سب ساعتیں جاگتی ہیں ابھی
نہر پر تو مرے ساتھ چلتا رہا، چاند جلتا رہا
میں تو یہ جانتا ہوں کہ جس شب مجھے چھوڑ کر تم گئے
آسمانوں سے شعلہ نکلتا رہا ، چاند جلتا رہا
رات آئی تو کیا کیا کرشمے ہوئے تجھ کو معلوم ہے؟
تیری یادوں کا سورج اُبلتا رہا ، چاند جلتا رہا
رات بھر میری پلکوں کی دہلیز پر خواب گرتے رہے
دل تڑپتا رہا، ہاتھ ملتا رہا ، چاند جلتا رہا
یہ دسمبر کہ جس میں کڑی دھوپ بھی میٹھی لگنے لگے
تم نہیں تو دسمبر سلگتا رہا، چاند جلتا رہا
آج بھی وہ تقدس بھری رات مہکی ہوئی ہے وصی
میں کسی میں ، کوئی مجھ میں ڈھلتا رہا ، چاند جلتا رہا

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer