Latest Post
Loading...

Mehik Wafa Ki Koi Phool Se Juda Na Kare,Karon Mein Eid Tere Bin Koi Khuda Na Kare (Shahzad Qais)


مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے
کروں میں عید ترے بن کوئی خدا نہ کرے
جو چاند دیکھیں تو ہونٹوں کے چار چاند ملیں
سِوائے شکر کے پلکوں سے کچھ گرا نہ کرے
دُعا کا کاسہ بھی دونوں بنائیں مل جل کر
کوئی بھی اَپنے دَو ہاتھوں سے اَب دُعا نہ کرے
گلے ملیں تو کئی صدیوں تک سُکُوت رہے
رُکیں یوں گردِشیں دَھڑکن تلک چلا نہ کرے
نگاہیں بات نگاہوں کی یوں سمجھتی ہوں
لبوں سے کہہ کے کوئی عرضِ مدعا نہ کرے
خدا کرے کہ جفا عمر بھر میں کر نہ سکوں
اَگر کروں تو میری زِندگی وَفا نہ کرے
لبوں سے یوں چنوں پلکوں سے تیری غم ریزے
نصیب نام سے بھی غم کے آشنا نہ کرے
وُہ بازُو کیا جو سمیٹیں نہ عمر بھر تجھ کو
وُہ سر ہی کیا ، ترے زانو پہ جو رَہا نہ کرے
تری جبیں پہ مرے لب قنوتِ عشق پڑھیں
کسی کی تیرے سِوا جسم اِقتدا نہ کرے
وِصال و ہجر تو مولا کی دین وُہ جانے
نماز پیار کی دَھڑکن کبھی قضا نہ کرے
جدائی ہو تو مری عمر تجھ کو لگ جائے
وُہ قیس کیا جو حیات عشق میں فنا نہ کرے

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer