Latest Post
Loading...

Baat Karni Mujhe Mushkil Kabhi Aisi Tou Na Thi Jaisi Ab Hai Teri Mehfil Kabhi Aisi Tou Na Thi


بات کرنی مجھے مُشکل کبھی ایسی تو نہ تھی
جیسی اب ہے تیری محفل کبھی ایسی تو نہ تھی

لے گیا چِھین کے کون آج تیرا صبر و قرار
بےقراری تجھے اے دل کبھی ایسی تو نہ تھی

چشمِ قاتل، میری دُشمن تھی ہمیشہ، لیکن
جیسی اب ہو گئی قاتل کبھی ایسی تو نہ تھی

اُن کی آنکھوں نے خُدا جانے کیا کیا جادُو
کہ طبیعت میری مائل کبھی ایسی تو نہ تھی

عکسِ رُخِ یار نے کس سے ہے تجھے چمکایا
تاب تجھ میں ماہِ کامل کبھی ایسی تو نہ تھی

کیا شباب! تُو جو بگڑتا ہے ظفر سے ہر بار
خُو تیری حُور شمائل کبھی ایسی تو نہ تھی

Baat Karni Mujhe Mushkil Kabhi Aisi Tou Na Thi
Jaisi Ab Hai Teri Mehfil Kabhi Aisi Tou Na Thi

Le Gaya Cheen Ke Kon Aaj Tera Sabar-o-Qarar
Beqarari Tujhe Aey Dil Kabhi Aisi Tou Na Thi

Chim-e-Qatil,Meri Dushman Thi Hamesha,Lekin
Jaisi Ab Ho Gayi Qatil Kabhi Aisi Tou Na Thi

Unki Aankhon Ne Khuda Jane Kia Kia Jadoo
Keh Tabia'at Meri Ma'ail Kabhi Aisi Tou Na Thi

Aks-e-Rukh-e-Yaar Ne Kis Se Hai Tujhe Chamkaya
Taab Tujh Mein Maah-e-Kaamil Kabhi Aisi Tou Na Thi

Kia Shabaab ! Tuu Jo Bigadta Hai ZAFAR Se Har Baar
Khuu Teri Hoor Shamaa'il Kabhi Aisi Tou Na Thi


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer