Latest Post
Loading...

Lab Tere Laal-O-Naab Hain Donoon Par Tamaami Ataab Hain Donoon


Poet Meer Taqi Meer
Book Intkhab Kalam-E-Meer
Page 300
Ghazal No 301

Lab Tere Laal-O-Naab Hain Donoon

Par Tamaami Ataab Hain Donoon

Rona Aankhoon Ka Roiye Kab Tak ?

Phootnay Hi K Baab Hain Donoon

Hai Takluf Naqab Way Rukhsaar

Kaya Chhapees Aaftaab Hain Donoon

Tan K Ma'Amooray Hain Yahi Dil-O-Chasham

Ghar Thay Do So Kharaab Hain Donoon

Paoun Mein Wo Nashah Talab Ka Nahain

Ab To Sar Masat Khawaab Hain Donoon

Aik Sab Aag
Aik Sab Pani

Deedah-O-Dil Azaab Hain Donoon

Behas Kaahay Ko Laal-O-Marjaan Se?

Us K Lab Hi Jawaab Hain Donoon

Aagay Dariya Thay Deedah Tar MEER

Ab Jo Daikho Saraab Hain Donoon...................*
 

شاعر میر تقی میر
بک انتخاب کلام میر
صفحہ 300
غزل 301
قافیہ ناب ہیں عتاب ہیں باب ہیں
ردیف دونوں


لب ترے لعل و ناب ہیں دونوں
پر تمامی عتاب ہیں دونوں
.
رونا آنکھوں کا روئیے کب تک؟
پھوٹنے ہی کے باب ہیں دونوں
.
ہے تکلف نقاب وے رخسار
کیا چھپیس آفتاب ہیں دونوں
.
تن کے معمورے ہیں یہی دل و چشم
گھر تھے دو سو خراب ہیں دونوں
.
پاؤں میں وہ نشہ طلب کا نہیں
اب تو سرمست خواب ہیں دونوں
.
ایک سب آگ ایک سب پانی
دیدہ و دل غذاب ہیں دونوں
.
بحث کاہے کو لعل و مرجان سے؟
اس کے لب ہی جواب ہیں دونوں
.
آگے دریا تھے دیدہ تر میر
اب جو دیکھو سراب ہیں دونوں


0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer