Latest Post
Loading...

Qail Thi Yun Tou Dard Ki Mehfil Jagah Jagah,Hum Hi Suna Saky Na Gham-e-Dil Jagah Jagah


قائم تھی یوں تو درد کی محفل جگہ جگہ
ہم ہی سنا سکے نہ غمِ دل جگہ جگہ
طوفانِ موج خیز کے خُوگر، سنبھل سنبھل
حائل ہیں تیری راہ میں ساحل جگہ جگہ
دل ہر مقامِ شوق سے آگے نکل گیا
دامن کو کھینچتی رہی منزل جگہ جگہ
ہر نقشِ پا تھا میرے لیے تیرا آستان
آئی نظر مجھے تری محفل جگہ جگہ
شانِ کرم کو عذرِ طلب بھی تھا ناگوار
پھیلا کے ہاتھ رہ گیا سائل جگہ جگہ
ہر اِک قدم پہ ٹھوکریں کھانے کے باوجود
کھائے فریبِ وعدۂ باطل جگہ جگہ
ہے جوشِ گریہ، موجِ تبسم سے ہم کنار
ہوتے ہیں حسن و عشق مقابل جگہ جگہ
صوفی تبسم

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer