Latest Post
Loading...

Ab Ke Saal Poonam Mein Jab Too Aayegi Milne Ham Ne Soch Rakha Hai Raat Yoon Guzaarenge


Ab Ke Saal Poonam Mein Jab Too Aayegi Milne
Ham Ne Soch Rakha Hai Raat Yoon Guzaarenge

Dhadkanen Bicha Denge Shokh Taire Qadmon main
Ham Nigaahon Se Teri ,,Aarti Utaarenge
 
Tu Ke Aaj Qatil Hai, Phir Bhe Rahat-E-Dil Hai
Zeher Ke Nadi Hai Tu, Phir Bhe Qeemti Hai Tu
 
Past Hoslay Walay Tera Sath Kya Dain Gai
Zindagi Idher Aa Ja,, Hum Tujhe Guzarain Gai
 
Aa’hani Kalejay Ko Zakhem Ke Zarorat Hai
Ungliyon Se Jo Tapkay,, us Lahoo Ke Hajat Hai
 
Aap Zulf-E-Janan Ke Kham Sanwariye Sahab
Zindagi Ki Zulfon Ko,, Aap Kya Sanwarain Gai
 
Hum To Waqt Hein Pel Hein, Taiz Gam Ghariyan Hein
Baiqarar Lamhay Hein, Bai’takan Sadiyan Hein
 
Koi Sath Mein Apne, Aye Ya Nahi Aye
Jo Mile Ga Rastay Mein Hum Osay Pukarain Gai...!!!
Nasir Kazmi

اب کے سال پونم میں جب تو آئے گی ملنے
ہم نے سوچ رکھا ہے رات یوں گزاریں گے
دھڑکنیں بچھا دیں گے، شوخ ترے قدموں میں
ہم نگاہوں سے تیری، آرتی اتاریں گے

تو کہ آج قاتل ہے، پھر بھی راحتِ دل ہے
زہر کی ندی ہے تو، پھر بھی قیمتی ہے تو
پَست حوصلے والے، تیرا ساتھ کیا دیں گے!
زندگی اِدھر آجا! ہم تجھے گزاریں گے!

آہنی کلیجے کو، زخم کی ضرورت ہے
انگلیوں سے جو ٹپکے، اُس لہو کی حاجت ہے
آپ زلفِ جاناں کے خم سنواریے صاحب!
زندگی کی زلفوں کو آپ کیا سنواریں گے!

ہم تو وقت ہیں، پل ہیں، تیز گام گھڑیاں ہیں
بے قرار لمحے ہیں، بے تھکان صدیاں ہیں
کوئی ساتھ میں اپنے، آئے یا نہیں آئے
جو ملے گا رستے میں،ہم اسے پکاریں گے

ناصر کاظمی

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer