Latest Post
Loading...

Darya Ne Kal Jo Chup Ka Lubada Pehin Lia Piyason Ne Apne Jisam Pe Sahra Pehin Lia



دریا نے کل جو چپ کا لبادہ پہن لیا
پیاسوں نے اپنے جسم پہ صحرا پہن لیا

وہ ٹاٹ کی قبا تھی کہ کاغذ کا پیرہن
جیسا بھی مل گیا ہمیں ویسا پہن لیا

فاقوں سے تنگ آئے تو پوشاک بیچ دی
عریاں ہوئے تو شب کا اندھیرا پہن لیا

گرمی لگی تو خود سے الگ ہو کے سو
سردی لگی تو خود کو دوبارہ پہن لیا

بھونچال میں کفن کی ضرورت نہیں پڑی
ہر لاش نے مکان کا ملبہ پہن لیا

بیدل لباسِ زیست بڑا دیدہ زیب تھا
اور ہم نے اس لباس کو الٹا پہن لیا

بیدل حیدری

 
Darya Ne Kal Jo Chup Ka Lubada Pehin Lia 

Piyason Ne Apne Jisam Pe Sahra Pehin Lia

Wo Taat Ki Quba Thi Keh Kaghaz Ki Pairhan 

Jaisa Bhi Mil Gaya Humein Waisa Pehin Lia

Faqoon Se Tang Aaye Tou Poshaak Baich Di 

Uryan Hoe Tou Shab Ka Andhera Pehin Lia

Garmi Lagi Tou Khud Se Alag Ho Ke So 

Sardi Lagi Tou Khud Ko Dobara Pehin Lia

Bhonchaal Mein Kafan Ki Zarorat Nahi Padi 

Har Laash Ne Makaan Ka Malba Pehin Lia

"Bedal" Libaas-e-Zeest Bada Deedahzaib Tha 

Aur Hum Ne Us Libaas Ko Ulta Pehin Lia

Bedal Haidri

 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer