Latest Post
Loading...

Kaash Mein Tere Bin Gosh Ka Bunda Hota Raat Ko Be-Khabri Mein Jo Machal Jata Main





مجید امجد کی ایک خوبصورت نظم "بُندا" جس سے متاثر ہو کر وصی شاہ نے اپنی مشہور نظم "کنگن" لکھی تھی یاد رہے کہ یہ نظم وصی شاہ کی نظم کنگن لکھنے سے تقریباً 35 سال پہلے لکھی گئی تھی

کاش میں تیرے بن گوش کا بندا ہوتا
رات کو بے خبری میں جو مچل جاتامیں
تو ترے کان سے چپ چاپ نکل جاتا میں
صبح کو گرتے تری زلفوں سے جب باسی پھول
میرے کھو جانے پہ ہوتا ترا دل کتنا ملول
تو مجھے ڈھونڈتی کس شوق سے گھبراہٹ میں
اپنے مہکے ہوئے بستر کی ہر اک سلوٹ میں
جونہی کرتیں تری نرم انگلیاں محسوس مجھے
ملتا اس گوش کا پھر گوشہ مانوس مجھے
کان سے تو مجھے ہر گز نہ اتارا کرتی
تو کبھی میری جدائی نہ گوارا کرتی
یوں تری قربت رنگیں کے نشے میں مدہوش
عمر بھر رہتا مری جاں میں ترا حلقہ بگوش
کاش میں تیرے بن گوش کا بندا ہوتا!
مجید امجد
<><><><><><><><><><><><><><><><><><><>
 Kaash Mein Tere Bin Gosh Ka Bunda Hota
Raat Ko Be-Khabri Mein Jo Machal Jata Main
Tou Tere Kaan Se Chupchaap Nikal Jata Main
Subah Ko Girte Teri Zulfon Se Jab Basi Phool
Mere Kho Jane Pe Hota Tera Dil Kitna Malol
Tuu Mujhe Dhondti Kis Shouq Se Ghabrahat Mein
Apne Mehke Hoe Bistar Ki Har Ik Salvat Mein
Junhi Kartein Teri Narm Unglian Mahsoos Mujhe
Milta Is Gosh Ka Phir Gosha-e-Manoos Mujhe
Kaan Se Tu Mujhe Hargiz Na Utara Karti
Tu Kabhi Meri Judai Na Gawara Karti
Yun Teri Qurbat-e-Rangeen Ke Nashy Mein Madhosh
Umar Bhar Rehta Meri Jaan Mein Tera Halqabagosh
  Kaash Mein Tere Bin Gosh Ka Bunda Hota
Majeed Amjad
<><><><><><><><><><><><><><><><><><><><>
"کنگھن" از وصی شاہ
کاش میں تیرے حسین ہاتھ کا کنگن ھوتا
تو بڑے پیار سے ' چاؤ سے، بڑے مان کے ساتھ
اپنی نازک سی کلائی میں چڑھاتی مجھ کو
اور بے تابی سے فرقت کے خزان لمحوں میں
تو کسی سوچ میں ڈوبی جو گھماتی مجھ کو
میں تیرے ہاتھ کی خوشبو سے مہک سا جاتا
جب کبھی موڈ میں آ کر مجھے چوما کرتی
تیرے ہونٹوں کی میں حدت سے دہک سا جاتا
رات کو جب بھی تو نیندوں کے سفر پر جاتی
مر مریں ہاتھ کا اک تکیہ بنایا کرتی
میں تیرے کان سے لگ کر کئی باتیں کرتا
تیری زلفوں کو تیرے گال کو چوما کرتا
جب بھی تو بند قبا کھولنے لگتی جاناں
اپنی آنکھوں کو ترے حسن سے خیره کرتا
مجھ کو بے تاب سا رکھتا تری چاہت کا نشہ
میں تری روح کے گلشن میں مہکتا رہتا
میں ترے جسم کے آنگن میں کھنکتا رہتا
کچھ نہیں تو یہی بے نام سا بندھن ہوتا
کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ھوتا

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer