Latest Post
Loading...

Ye Akelypan Ki Udasiyaan,Ye Firaq Lamhy Azab Se


یہ اکیلے پن کی اداسیاں
یہ فراق لمحے عذاب سے
کبھی دشتِ دل پہ آ رکیں
تیری چاھتوں کے سحاب سے

میں ھوں تجھ کو جاں سے عزیزتر
میں یہ کیسے مان لوں اجنبی
تیری بات لگتی ھے وھم سی
تیرے لفظ لگتے ھیں خواب سے

یہ جو میرا رنگ و روپ ھے
یونہی بے سبب نہیں دوستو
میرے خوشبوؤں سے ھیں سلسلے
میری نسبتیں ھیں گلاب سے

اسے جیتنا ھے تو ھمنشیں
یونہی گفتگو سے نہ کام لے
کوئی چاند لاکے جبیں پہ رکھ
کوئی لا گہر تہہِ آب سے

وھی معتبر ھے میرے لیے
وہ جو حاصلِ دل و جان ھے
وہ جو باب تم نے چُرا لیا
میری زندگی کی کتاب سے

افتخار عارف

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer