Latest Post
Loading...

Aaj Phir Jeene Ki Tamanna Hai,Aaj Phir Marne Ka Irada Hai


آج پھر جینے کی تمنّا ہے، آج پھر مرنے کا ارادہ ہے
وحیدہ رحمان لتا منگیشکر
کانٹوں سے کھینچ کے یہ آنچل
توڑ کہ بندھن باندھے پایل
ہو او او کوئی نا روکے دل کی اڑان کو
دل وہ چلا آ آ آ آ آ
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
اپنے ہی بس میں نہیں میں
دل ہے کہیں تو ہوں کہیں میں
ہو او ہو ہو ہو ہو ہو
اپنے ہی بس میں نہیں میں
دل ہے کہیں تو ہوں کہیں میں
ہو او ہو ہو ہو ہو ہو
جانے کیا پاکر میری زندگی نے
ہنس کر کہا ہہا ہاہاہاہاہ
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
میں ہوں غبار یا طوفاں ہوں
کوئی بتائے میں کہاں ہوں
او او او او او
میں ہوں غبار یا طوفاں ہوں
کوئی بتائے میں کہاں ہوں
او او او او او
ڈر ہے سفر میں کھو نا جائوں
رستہ نیا آ آ آ آ آ آ آ آ
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
کل کے اندیروں سے نکل کے
دیکھا ہے آنکھیں ملتے ملتے
ہو او او او او
کل کے اندیروں سے نکل کے
دیکھا ہے آنکھیں ملتے ملتے
ہو او او او او
پھول ہی پھول زندگی بہار ہے
طہء کر لیا آ آ آ آ آ آ
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے
آج پھر جینے کی تمنا ہے
آج پھر مرنے کی ارادہ ہے

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer