Latest Post
Loading...

Aaj Ki Raat To Mansoob Tere Naam Se Hai,Aaj Kion Chaand Sitaron Pe Nazar Jaai Gi


صفیہ کے نام
شاعر جان نثار اختر
بک نذر ۓ بتاں ماخوذ کلیات جان نثار اختر صفحہ 95 97
انتخاب اجڑا دل
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
آج کیوں چاند ستاروں پہ نظر جاۓ گی
کیا رکھا ہے جو بہاروں پہ نظر جاۓ گی
تو کہ خود ماہ و شان چمن اندام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
ایک طغیان ۓ طرب ہے میرے کاشانے میں
اک صنم آہی گیا دل کے صنم خانے میں
شہر میں قیامت تیرے اقدام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
دل کی دھڑکن کو اشارے کی ضرورت نہ رہی
کسی رنگین نظارے کی ضرورت نہ رہی
رنگ نظروں میں تیرے عارض ۓ گلفام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
تیری پلکوں کے جھپکنے کی ادا کافی ہے
تیری جھکتی ہوئی آنکھ کا نشہ کافی ہی
اب نہ شیشے سے غرض ہے نہ مۓ و جام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
مہکی مہکی تیری زلفوں کی گھٹا چھائی ہے
تو مجھے کون سی منزل پے اڑا لائی ہے
زندگی میں اتری چلی جاتی ہیں نگاہیں تیری
مجھ کو حلقے میں لیۓ لیتی ہیں باہیں تیری
اک اجالا سا میرے گرد شام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
تیرے احساس پہ دنیا کی لطافت صدقے
اک خوشی تجھ کو میرے پیار کے الزام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے
 دل میں اک شوق کا طوفان رہنے دے
اپنا سر تو میرے شانے پہ جھکا رہنے دے
عشق بیتاب سہی حسن تو آرام سے ہے
آج کی رات تو منسوب تیرے نام سے ہے

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer