Latest Post
Loading...

Mat Roko Inhein Paas Ane Do,Ye Mujh Se Milne Aay Hein


آخری ملاقات
شاعر جان نثار اختر
بک نذر ۓ بتاں ماخوذ کلیات جان نثار صفحہ 113 118
انتخاب اجڑا دل
مت روکو انہیں پاس آنے دو
یہ مجھ سے ملنے آۓ ہیں
میں خود نہ جنہیں پہچان سکوں
کچھ اتنے دھندلے ساۓ ہیں
دو پاؤں بنے ہریالی پر
اک تتلی بیٹھی ڈالی پر
کچھ جگ مگ جگنوں جنگل سے
کچھ جھومتے ہاتھی بادل سے
یے ایک کہانی نیند بھری
اک تخت پہ بیٹھی اک پری
کچھ گن گن کرتے پروانے
دو ننھے ننھے دستانے
السائی ہوئی رت ساون کی
کچھ سوندھی خوشبو آنچل کی
اک ٹوٹی رسی جھولے کی
اک چوٹ کسکتی کولہی کی
کچھ چاند چمکتے گالوں کے
کچھ بھنورے کالے بالوں کے
کچھ نازک شکنیں آنچل کی
کچھ نرم لکیریں کاجل کی
اک کھوئی کڑی افسانوں کی
دو آنکھیں روشن دانوں کی
اک سرخ دلائی گوٹ کی
کیا جانے کب کی چوٹ لگی
اک چھلا پھیکی رنگت کا
اک لاکٹ دل کی صورت کا
رومال کئی ریشم سے کڑھے
وہ خط جو کبھی میں نے نہ پڑھے
اجڑی ہوئی مانگیں شاموں کی
آواز شکستہ جاموں کی
کچھ ٹکڑے خالی بوتل کے
کچھ گھنگھرو ٹوٹی پائل کے
کچھ بکھرے تنکے چلمن کے
کچھ پرزے اپنے دامن کے
کچھ تارے سے یے تھراۓ ہوۓ
کچھ گیت کبھی کے گاۓ ہوئے
کچھ شعر پرانی غزلوں کے
عنواں ادھوری نظموں کے
ٹوٹی ہوئی اشکوں کی لڑی
اک خشک قلم اک بند گھڑی
کچھ ساتھی چھوٹے چھوٹے سے
کچھ رشتے ٹوٹے ٹوٹے سے
کچھ بگڑی بگڑی تصویریں
کچھ دھندلی دھندلی تحریریں
کچھ آنسوں چھلکے چھلکے سے
کچھ موتی ڈھلکے ڈھلکے سے
کچھ نقش یے حیراں حیراں سے
کچھ عکس یے لرزاں لرزاں سے
کچھ اجڑی اجڑی دنیائیں
کچھ بھٹکی بھٹکی آشائیں
کچھ بکھرے بکھرے سپنے ہیں
یے غیر نہیں سب اپنے ہیں
مت روکو انہیں پاس آنے دو
یے مجھ سے ملنے آۓ ہیں
میں خود نہ جنہیں پہچان سکوں
کچھ اتنے دھندلے ساۓ ہیں

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer