Latest Post
Loading...

Adeeb Kab Howa Khateeb Kab Howa,Dil Qatal Gah-E-Zaat Ki Tahzeeb Kab Howa (Razab Tabraiz)





ادیب کب ہوا کوئی
  خطیب کب ہوا
دل قتل گاہ_ذات کی
تہزیب کب ہوا

ہم زاد پہ الزام کا
فقدان کیا ہوا
رہا اگر مقابل تو
حبیب کب ہوا

حجاب کیسے راتوں
رات ہوگیا آزاد
ذات کا غلام یہ
منیب کب ہوا

ناؤ کیسے بچ رہی
جنوں کے ہاتھ سے
شجاع سالار خون میں
شکیب کب ہوا

بوڑها بهیدی کیسے
خالی ہاتھ کر گیا
اپنے ہنر سایہء حق
نقیب کب ہوا

چار پل کی جنتیں
کیا جنتیں ہوئیں
چار پل کا زائچہ
نصیب کب ہوا

کب سے "بیگم آرزو"
کی کر لی چاکری
قلم_رزب عقل کا
رقیب کب ہوا
  (رزب تبریز)

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer